Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ و آندھراپردیش میںائمہ و مؤذنین کو اعزازیہ کی عنقریب اجرائی

تلنگانہ و آندھراپردیش میںائمہ و مؤذنین کو اعزازیہ کی عنقریب اجرائی

مسلمانوں کو 4فیصد تحفظات پر موثر عمل آوری کیلئے دونوں ریاستوں کی حکومتوں کو اقلیتی کمیشن کی سفارش
حیدرآباد ۔ 16 ڈسمبر (سیاست نیوز) ریاستی اقلیتی کمیشن نے آج کہا کہ تلنگانہ اور آندھرا پردیش کی حکومتوں نے فیصلہ کیا ہے کہ ائمہ کرام و مؤذنین کو ماہانہ اعزازیہ عطا کیا جائے۔ اقلیتی کمیشن کے چیرمین عابد رسول خاں نے کہا کہ دونوں ریاستوں تلنگانہ و آندھرا پردیش کی حکومتوں نے اس اسکیم پر عنقریب عمل آوری کا اعلان کیا ہے۔ تلنگانہ حکومت کی جانب سے ائمہ و مؤذنین کو ماہانہ ایک ہزار روپئے اعزازیہ دیا جائے گا اس کے لئے 12کروڑ روپئے کا بجٹ مختص کیا گیا ہے جس کے تحت 5ہزار درخواستوں کی یکسوئی کی جائے گی۔ حکومت آندھرا پردیش نے بھی اپنی ریاست کے ائمہ و مؤذنین کیلئے ماہانہ اعزازیہ 6ہزار اور 5ہزار روپئے مقرر کیا ہے۔ عابد رسول خاں کے مطابق ضلع اقلیتی بہبود آفیسرس کے پاس درخواستیں داخل کرنے کی آخری تاریخ 30ڈسمبر ہے۔ کمیشن نے اظہار اطمینان کیا کہ دونوں ریاستوں کی حکومتوں نے اس سلسلہ میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔ حکومت تلنگانہ سے سفارش کی گئی ہے کہ وہ بھی آئندہ مالیاتی سال سے ائمہ کرام اور مؤذنین کے اعزازیہ میں ماہانہ کم از کم 5ہزار کا اضافہ کرے۔ کمیشن نے دونوں ریاستوں کے ائمہ کرام اور مؤذنین کی سماجی اور معاشی صورتحال کا سروے کروایا ہے اس دوران تقریبا 8000 مساجد سے درخواستیں وصول کی گئی ہیں۔حکومت کو تمام اقلیتی طبقات جنہیں بی سی ای کے تحت تحفظات فراہم کئے گئے ہیں، انہیں 4 فیصد تحفظات کی فراہمی کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے۔ جناب عابد رسول خان صدرنشین ریاستی اقلیتی کمیشن آندھراپردیش و تلنگانہ نے آج ایک پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ دونوں ریاستوں کی حکومتوں کو کمیشن کی جانب سے مکتوب روانہ کرتے ہوئے اس بات کی سفارش کی گئی ہیکہ وہ چار فیصد تحفظات پر مؤثر عمل آوری کو یقینی بنانے کے اقدامات کرے تاکہ تمام محکمہ جات میں درکار عملہ کی تعیناتی کے ساتھ ساتھ محکموں کو بہتر انداز میں کارکردگی انجام دینے کا موقع میسر آ سکے۔

جناب عابد رسول خاں نے بتایا کہ کمیشن کی جانب سے ریاست تلنگانہ و آندھراپردیش کے محکمہ جات سے تفصیلات وصول کرتے ہوئے چار فیصد تحفظات پر عمل آوری کا جائزہ لیا گیا اور اس بات کا سروے کروایا گیا کہ محکمہ جات تقررات کے موقع پر 4 فیصد تحفظات کو کس طرح عملی جامہ پہنا رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ بیشتر محکمہ جات میں نصف سے زائد عملہ کی عدم موجودگی محکموں کی کارکردگی کو متاثر کررہی ہے۔ اسی لئے حکومت سے خواہش کی گئی ہیکہ حکومت فوری طور پر اقدامات کرتے ہوئے تقررات کیلئے اعلامیہ جاری کرے تاکہ تقررات کا عمل ممکن بنایا جاسکے۔ علاوہ ازیں اقلیتی نوجوانوں کو جنہیں تحفظات حاصل ہیں وہ 4 فیصد تحفظات سے استفادہ حاصل کرتے ہوئے ملازمت سے وابستہ ہوں۔ جناب عابد رسول خاں نے پریس کانفرنس کے دوران مختلف محکمہ جات بالخصوص محکمہ زراعت، محکمہ برقی، محکمہ داخلہ، محکمہ ٹرانسپورٹ، محکمہ عمارات و شوارع، محکمہ مال، محکمہ پنچایت راج، محکمہ بلدیہ، محکمہ اقلیتی بہبود کے علاوہ مائناریٹی کمیشن، واٹر ورکس، فائر ڈپارٹمنٹ و دیگر محکمہ جات سے موصولہ تفصیلات حوالہ کرتے ہوئے بتایا کہ تمام محکموں سے اس بات کی خواہش کی گئی ہیکہ وہ جاری کئے جانے والے اعلامیہ کے مطابق عوام میں شعور اجاگر کرے۔
انہوں نے بتایا کہ ریاستی اقلیتی کمیشن کی جانب سے بھی ملازمتوں کے حصول کیلئے جاری کئے جانے والے اعلامیہ کے متعلق شعور بیداری کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT