Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ و اے پی کے حجاج کرام کی واپسی آخری مرحلے میں داخل ،آج مزید تین قافلوں کی آمد ، اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور کا بیان

تلنگانہ و اے پی کے حجاج کرام کی واپسی آخری مرحلے میں داخل ،آج مزید تین قافلوں کی آمد ، اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور کا بیان

حیدرآباد ۔ 10 اکتوبر (سیاست نیوز)  فریضہ حج کی ادائیگی کے بعد مدینہ منورہ میں مقیم تلنگانہ و آندھراپردیش کے حجاج کرام کی واپسی کا عمل آخری مرحلہ میں داخل ہوچکا ہے۔ آج 12 قافلوں میں جملہ 4067 حجاج کرام وطن واپس ہوچکے ہیں۔ 11 اکتوبر منگل کو تین قافلوں کی واپسی سے حجاج کرام کی واپسی کا عمل مکمل ہوجائے گا۔ اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ آج صبح 3.20 بجے 339 حجاج کرام کے ساتھ ایر انڈیا کی پہلی فلائیٹ شمس آباد انٹرنیشنل ایرپورٹ پہنچی جس میں کرناٹک کے ججاج کرام تھے۔ آندھراپردیش کے دو حاجی اس قافلہ میں شامل تھے۔ دوسری فلائیٹ رات 11.20 بجے پہنچی جس میں آندھراپردیش کے علاوہ تلنگانہ کے 40 حجاج کرام شامل ہیں۔ پروفیسر ایس اے شکور نے حج ٹرمنل پر حجاج کرام کا استقبال کیا اور انہیں فریضہ حج کی ادائیگی پر مبارکباد پیش کی۔ فی حاجی 5 لیٹر زم زم کا کیان حوالے کیا گیا۔ پہلے قافلہ کے حجاج نے حج ٹرمنل میں نماز فجر ادا کی۔ پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ 20 حجاج کرام مقررہ شیڈول سے قبل حیدرآباد واپس ہوگئے۔ سرکاری کوٹہ میں روانہ ہونے والے حج کمیٹی کے دو اور وقف بورڈ کا ایک خادم الحجاج بھی وطن واپس ہوچکے ہیں۔ حجاج کرام نے سعودی عرب میں انتظامات پر اطمینان کا اظہار کیا۔ حج ٹرمنل میں سرکاری امور کی تکمیل کے سلسلہ میں حج کمیٹی کے عہدیداروں نے تعاون کیا۔ اضلاع سے تعلق رکھنے والے حجاج کرام حج ہاؤز میں قیام کے بعد اپنے مقامات کو روانہ ہوگئے۔ منگل 11 اکتوبر کو پہلی فلائیٹ رات 3.05 بجے اور دوسری صبح 7.05 بجے حیدرآباد پہنچے گی۔ حجاج کرام کا آخری قافلہ رات 9.00 بجے شمس آباد انٹرنیشنل ایرپورٹ پہنچے گا۔ اسی دوران حجاج کرام نے ایر انڈیا کے رویہ کے بارے میں حج کمیٹی کو شکایت کی ہے۔ بتایا جاتاہے کہ فلائیٹ میں اور پھر حج ٹرمنل پہنچنے کے بعد ایر انڈیا کے حکام کی جانب سے کوئی رہنمائی نہیں کی جارہی ہے۔ حج قافلوں کی واپسی کے آغاز کے بعد سے ہی ایر انڈیا کا رویہ ٹھیک نہیں ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ کل 340حجاج کرام کو سفر کے دوران لنچ فراہم نہیں کیا گیا جس کے باعث کئی حجاج کی طبیعت خراب ہوگئی اور مسلسل 5 گھنٹوں تک بھوکے رہنے کے سبب شوگر کے مریضوں کو مشکلات پیش آئیں۔ حجاج کرام نے شکایت کی کہ فلائیٹ میں جب ضروری دوائیں دینے کی خواہش کی گئی تو حکام نے لاعلمی کا اظہار کردیا۔ ایر انڈیا کے اس رویہ کے خلاف سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے سنٹرل حج کمیٹی، سکریٹری وزارت اقلیتی امور حکومت ہند اور نئی دہلی میں ایر انڈیا انچارج حج امور سے شکایت کی گئی ہے۔ اسی دوران ایر انڈیا کی جانب سے 140 زم زم کیانس کے لاپتہ کرنے کے معاملے کو بھی سنٹرل حج کمیٹی سے رجوع کیا گیا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ ایر انڈیا کے مقام حکام اس معاملہ کو دبانے کی کوشش کر رہے ہیں جبکہ حج کمیٹی کے پاس زائد کیانس کی وصولی کا مکتوب موجود ہے۔ شبہ کیا جارہا ہے کہ ایر انڈیا اور بعض دیگر محکمہ جات کے عہدیداروں نے آپس میں یہ کیانس تقسیم کرلئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT