Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن سے انجینئرس کے تقررات ، اردو میڈیم امیدواروں کے ساتھ نا انصافی

تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن سے انجینئرس کے تقررات ، اردو میڈیم امیدواروں کے ساتھ نا انصافی

تلگو میڈیم پرچہ فراہمی کا فیصلہ ، اقلیتی امیدواروں میں مایوسی ، رکن کمیشن کی تجویز کو چیرمین نے بے خاطر کردیا
حیدرآباد۔/18ستمبر، ( سیاست نیوز) تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن نے مختلف محکمہ جات میں اسسٹنٹ ایکزیکیٹو انجینئرس کی جائیدادوں پر تقررات کے سلسلہ میں اردو میڈیم امیدواروںکے ساتھ ناانصافی کی ہے جبکہ تلگومیڈیم امیدواروں کیلئے تلگو زبان میں پرچہ فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ تلنگانہ حکومت کی جانب سے بڑے پیمانے پر تقررات کے آغاز کے بعد اقلیتوں میں امید پیدا ہوئی تھی کہ سرکاری ملازمتوں میں ان کی نمائندگی میں اضافہ ہوگا لیکن پبلک سرویس کمیشن نے اردو میڈیم طلبہ کو مایوس کیا ہے۔ تلگو میڈیم امیدواروںکیلئے جب جنرل اسٹڈیز کا پرچہ ان کی مادری زبان میں فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا تو پھر اردو میڈیم طلبہ اس سہولت سے محروم کیوں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ کمیشن میں موجود واحد اقلیتی رکن ڈاکٹر متین الدین قادری نے کمیشن کے اجلاس میں بارہا تجویز پیش کی تھی کہ اردو میڈیم طلبہ کیلئے بھی جنرل اسٹڈیز کے پرچہ کو اردو زبان میں فراہم کیا جائے لیکن کمیشن کے صدرنشین نے صرف تلگو میڈیم طلبہ کے حق میں فیصلہ کیا۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ حکومت کی جانب سے تقررات کے آغاز کے باوجود کمیشن میں موجود افراد اقلیتوں کو مناسب نمائندگی دینے تیار نہیں ہیں۔ واضح رہے کہ 20ستمبر کو مختلف محکمہ جات میں اسسٹنٹ ایکزیکیٹو انجینئرس کی931 جائیدادوں پر تقررات کیلئے آن لائن امتحان مقرر ہے۔ مختلف تنظیموں اور تلگو میڈیم کے امیدواروں نے کمیشن سے نمائندگی کی تھی کہ انہیں جنرل اسٹڈیز کا پرچہ تلگوزبان میں فراہم کیاجائے تاکہ امیدواروں کو اپنی مادری زبان میں جواب دینے سہولت ہو۔ کمیشن کے صدرنشین ڈاکٹر چکرا پانی نے ان کی نمائندگی کے مطابق تلگو زبان میں پرچہ فراہم کرنے سے اتفاق کرلیا ہے جس کا آج باقاعدہ اعلان کیا گیا۔ کمیش کے ذرائع نے بتایا کہ امیدواروں کیلئے یہ پرچہ تلگو اور انگریزی زبان میں دستیاب رہے گا۔ وہ ان میں سے کسی ایک زبان کے پرچہ کا انتخاب کرسکتے ہیں۔ تلگو میڈیم کے امیدواروں نے شکایت کی تھی کہ جنرل اسٹڈیز کا پرچہ انگریزی زبان میں رکھے جانے کی صورت میں طلبہ  کو نقصان ہوسکتا ہے۔ دیگر پرچہ جات انگریزی زبان میں رہیں گے۔ 20ستمبرکو ہونے والے اس آن لائن امتحان میں 31ہزار طلبہ شرکت کررہے ہیں۔ پبلک سرویس کمیشن نے اسسٹنٹ انجینئرس کی 1056 جائیدادوں پر تقررات کیلئے اعلامیہ جاری کیا ہے جس کے لئے ابھی تک 50ہزار سے زائد درخواستیں داخل ہوچکی ہیں۔ لہذا یہ امتحان آن لائن نہیں ہوگا۔ بتایا جاتا ہے کہ کمیشن کی جانب سے اردو زبان کو نظر انداز کئے جانے کے مسئلہ کو چیف منسٹر سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا گیا کیونکہ کمیشن کے صدر نشین نے دیگر اراکین کو اعتماد میں لئے بغیر ہی تلگومیڈیم کے حق میں فیصلہ کرلیا ہے۔ انہیں چاہیئے تھا کہ وہ اردو میڈیم کے طلبہ کیلئے بھی اسی طرح کا فیصلہ کرتے۔ پبلک سرویس کمیشن میں اردو کو نظرانداز کرنے کا آغاز اس کے قیام سے ہی ہوچکا ہے ۔ حکومت نے اگرچہ ایک مسلم نمائندہ کو بحیثیت رکن شامل کیا لیکن بارہا توجہ دہانی کے باوجود پبلک سرویس کمیشن کے لوگو میں اردو کو جگہ نہیں دی گئی جبکہ تلنگانہ کے 10کے منجملہ 9 اضلاع میں اردو کو دوسری سرکاری زبان کا درجہ حاصل ہے۔ پبلک سرویس کمیشن کے لوگو میں صرف انگریزی اور تلگو زبان کو شامل کیا گیا۔ تلنگانہ حکومت کو چاہیئے کہ وہ فوری اس سلسلہ میں مداخلت کرے اور کمیشن کی جانب سے کئے جارہے تقررات میں اقلیتوں اور اردو میڈیم امیدواروں سے انصاف کو یقینی بنائیں۔

TOPPOPULARRECENT