Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کی ترقیاتی و فلاحی اسکیمات کی آندھرا پردیش میں تقلید

تلنگانہ کی ترقیاتی و فلاحی اسکیمات کی آندھرا پردیش میں تقلید

فلموں کی ڈبنگ کی طرح اسکیمات کی نقل ، جیون ریڈی کی تلگو دیشم پر تنقید
حیدرآبا۔/11 فبروری، ( سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے رکن اسمبلی جیون ریڈی نے الزام عائد کیا کہ آندھرا پردیش کی تلگودیشم حکومت تلنگانہ میں شروع کی گئی ترقیاتی اور فلاحی اسکیمات کی نقل کررہی ہے۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے جیون ریڈی نے کہا کہ آندھرا پردیش کی تلگودیشم حکومت فلموں کی ڈبنگ کی طرح تلنگانہ کی اسکیمات کی نقل کرتے ہوئے اسے اپنی اسکیم ثابت کرنے کی ناکام کوشش کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں تلگودیشم پارٹی کا صفایا ہوگیا اور اب چندرا بابو نائیڈو اور لوکیش کے سوا تلنگانہ میں کوئی بھی نہیں بچے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں چندر شیکھر راؤ حکومت نے جن اسکیمات کا آغاز کیا ہے انہیں ملک کی دیگر ریاستوں میں مقبولیت حاصل ہوئی ہے اور کئی ریاستی حکومتوں نے ان اسکیمات کو اپنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گریٹر انتخابات میں رائے دہندوں نے تلگودیشم اور کانگریس کو بری طرح مسترد کردیا اور چندرا بابونائیڈو اور لوکیش کی مہم کام نہ آسکی۔انہوں نے کہا کہ 150نشستوں میں تلگودیشم پارٹی کو صرف ایک وارڈ پر کامیابی حاصل ہوئی ہے اور اس طرح تلنگانہ میں تلگودیشم کو ایک بلدی وارڈ اور ایک قائد ریونت ریڈی باقی رہ گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریونت ریڈی دراصل تلگودیشم پارٹی کیلئے زوال کا سبب بن چکے ہیں اور ان کے سبب پارٹی کو ہر قدم پر ہزیمت کا سامنا ہے۔ جیون ریڈی نے چیف منسٹر کے خلاف ریونت ریڈی کے بیانات پر شدید ردعمل کا اظہار کیا اور کہا کہ اس طرح کے بے بنیاد الزامات سے تلگودیشم کو کوئی فائدہ  نہیں ہوگا۔ انہوں نے ریونت ریڈی کو مشورہ دیا کہ وہ حکومت پر بیجا تنقیدوں کے بجائے فلاحی اسکیمات میں تعاون کریں۔ جیون ریڈی نے کہا کہ ورنگل میں ہزیمت کے بعد بھی تلگودیشم نے سبق حاصل نہیں کیا جس کے سبب گریٹر عوام نے دوبارہ سبق سکھایا۔ انہوں نے تلگودیشم ارکان اسمبلی کی ٹی آر ایس میں شمولیت کی تائید کی اور کہا کہ قائدین اپنی مرضی سے تلگودیشم سے ٹی آر ایس میں شامل ہورہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT