Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کی ترقی کے دعوے ’’اُونچی دکان ، پھیکا پکوان‘‘

تلنگانہ کی ترقی کے دعوے ’’اُونچی دکان ، پھیکا پکوان‘‘

این آر آئیز کے ذہنوں میں مختلف سوالات ، کانگریس لیڈر ملوبٹی وکرامارک کا بیان

حیدرآباد۔13 جولائی (سیاست نیوز)ورکنگ پریسیڈنٹ تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی ملوبٹی وکرامارک نے ریاست میں کانگریس پارٹی کے اندر قیادت کا فقدان ہونے کی تردید کی۔ انہوں نے کہا کہ انتخابات سے قبل چیف منسٹر امیدوار کے اعلان کی روایت پارٹی میں کبھی نہیں رہی۔ امریکہ میں تقریباً ایک ماہ قیام کے بعد واپس ہوئے وکرامارک نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ کی ترقی کے دعوے ’’اُونچی دکان ، پھیکا پکوان‘‘ کے مماثل ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے بارے میں حقائق کا پتہ چلنے کے بعد این آر آئیز بھی تشویش کا شکار ہیں اور وہ تلنگانہ کی ترقی سے مطمئن نہیں ہے۔ انہوں نے این آر آئیز کو ریاست کا اثاثہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ کی ترقی کیلئے ان کا تعاون ضروری ہے لیکن ان میں یہ احساس پایا جاتا ہے کہ تلنگانہ میں جمہوریت کا فقدان ہے، ایک ہی خاندان کا نظم و نسق پر کنٹرول ہے اور ریاست ترقی کے بجائے پسماندگی کا شکار ہورہی ہے۔ یہ صورتحال تلنگانہ کیلئے نقصان دہ ہے۔ این آر آئیز کے ذہنوں میں گینگسٹر نعیم کی خطیر دولت اور ہیرے جواہرات کے بارے میں بھی مختلف سوالات ابھر رہے ہیں۔ آخر یہ دولت اور قیمتی ہیرے جواہرات کہاں گئے؟ میاں پور اراضی اسکام کی حقیقت جاننے کیلئے این آر آئیز بے چین ہیں، کیونکہ یہ ملک کا سب سے بڑا اسکام ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کانگریس کے بشمول دیگر اپوزیشن جماعتوں نے گینگسٹر نعیم انکاؤنٹر اور میاں پور اراضی اسکام کی سی بی آئی تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ این آر آئیز کی بہت جلد کانگریس نائب صدر راہول گاندھی سے ملاقات کرائی جائے گی اور امریکہ میں کانگریس این آر آئیز سیل کو مستحکم کیا جائے گا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT