Thursday , October 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / تلنگانہ کی تشکیل کے بعد چیف منسٹر کے سی آر کی سرسلہ آمد

تلنگانہ کی تشکیل کے بعد چیف منسٹر کے سی آر کی سرسلہ آمد

عوامی سروں کا سمندر۔ جگہ جگہ عوام کا والہانہ خیرمقدم
سرسلہ۔/11اکٹوبر، ( آصف علی سعادت کی رپورٹ ) ریاست تلنگانہ کی تشکیل کے بعد وزیر اعلیٰ چندر شیکھر راؤ کی یہاں پہلی بار آمد پر جگہ جگہ عوام نے ان کا والہانہ استقبال کیا جس کا انہوں نے عوام کو ہاتھ ہلاکر جواب دیا۔ وزیر اعلیٰ چندر شیکھر راؤ اپنے مقررہ وقت سے ایک گھنٹہ تاخیر سے یہاں بذریعہ ہیلی کاپٹر پہونچے۔ ہیلی پیاڈ پر ریاستی وزراء کے ٹی راما راؤ، ایٹالہ راجندر کے علاوہ رکن پارلیمنٹ کریم نگر بوئن پلی ونود کمار، ارکان اسمبلی گنگولہ کملاکر، رساکلا بالکشن، سی ایچ رمیش بابو، کوپولہ ایشور، جی شوبھا، صدر نشین اقلیتی مالیتی کارپوریشن سید اکبر حسین نے ہیلی پیاڈ پر ان کا استقبال کیا۔ جہاں سے انہیں مخصوص ٹورس گاڑی کے ذریعہ سرسلہ ویملواڑہ بائی پاس لے جایا گیا جہاں انہوں نے ضلع کلکٹریٹ آفس کامپلکس کے علاوہ پولیس ہیڈکوارٹر کے تعمیری کاموں کا سنگ بنیاد رکھا اور بعد ازاں انہوں نے کالج گراؤنڈ پر جلسہ عام کو مخاطب کیا اور کہا کہ حلقہ تلنگانہ کو سرسبزو شاداب دیکھنا ان کا دیرینہ خواب ہے۔ انہوں نے دوران علاقہ کی ترقی کیلئے حکومت کی جانب سے انجام دیئے جانے والے ترقیاتی کاموں کا تذکرہ کیا اور کہا کہ ضلع سرسلہ کے مختلف دیہاتوں کے کاشتکاروں کو پانی کی سربراہی کیلئے لفٹ ایرگیشن اسکیم کے تحت ترقیاتی کاموں کی انجام دہی کیلئے 130 کروڑ روپئے کی منظوری کا اعلان کیا۔ جبکہ انہوں نے ضلع بھر میں موجود 212 گرام پنچایتوں کی ترقی کیلئے فی گرام پنچایت 20 لاکھ کی منظوری کا اعلان کیا جس کا ریاستی وزیر کے ٹی آر نے شکریہ ادا کیا۔ وزیر اعلیٰ کے چندر شیکھر راو نے اپنے خطاب کو جاری رکھتے ہوئے کہا کہ حکومت ریاست میں تمام طبقات کیلئے ترقی کے یکساں مواقع فراہم کررہی ہے۔ مسلم بچوں کو اعلیٰ تعلیم اور معیاری تعلیم کیلئے ریاست میں 203 میناریٹی اسکولس قائم کئے۔ انہوں نے سرسلہ کے بنکروں کی قابلیت کی سراہنا کی اور کہا کہ علاقے کے بنکروں کی ماہانہ 15ہزار آمدنی فراہم کرنے کے منصوبہ کے تحت روزگار فراہم کررہی ہے۔ انہوں نے سرسلہ میں عنقریب بنکر خواتین کو اپرئل پارک قائم کرتے ہوئے اس پارک سے 6 ہزار خواتین کو روزگار سے مربوط کرنے کی بات کہی۔ انہوں نے ضلع سرسلہ کے لئے منڈلس اور اس کے تحت آنے والے آملیٹ دیہاتوں کو ترقی کیلئے فی کس 20 لاکھ روپئے منظور کرتے ہوئے خصوصی جی او کی اجرائی کا اعلان کیا۔ انہوں نے حاملہ خواتین کو کے سی آر کٹ کی فراہمی کا ذکر کیا اور کہا کہ آندھرا پردیش میں ہر سال سرکاری دواخانوں میں ایک لاکھ زچگیاں کی جاتی تھی لیکن اب کے سی آر کٹ کی فراہمی کے بعد صرف تلنگانہ بھر میں سالانہ 4 لاکھ خواتین سرکاری دواخانوں میں زچگیاں کرنے کا ریکارڈ قائم کیا گیا۔ وزیر اعلیٰ کی تقریر کے دوران 5 منٹ برقی سربراہی بند ہونے کی وجہ خلل اندازی کا انہیں سامنا کرنا پڑا۔

TOPPOPULARRECENT