Thursday , September 21 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کی ٹی آر ایس حکومت کی غلط پالیسیاں، تعلیمی شعبہ بحرانی کا شکار

تلنگانہ کی ٹی آر ایس حکومت کی غلط پالیسیاں، تعلیمی شعبہ بحرانی کا شکار

لاکھوں طلبہ کا مستقبل داؤ پر لگ گیا، صدر تلنگانہ پی سی سی اتم کمار ریڈی کا بیان
حیدرآباد ۔ 8 اکٹوبر (سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کیپٹن اتم کمار ریڈی نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت کی غلط پالیسیوں سے تعلیمی شعبہ بحران کا شکار ہوگیا ہے جس سے 14 لاکھ طلبہ کا مستقبل داؤ پر لگ گیا ہے۔ 2140 کروڑ روپئے کے فیس ریمبرسمنٹ بقایا جات فوری جاری کرنے کا حکومت سے مطالبہ کیا۔ آج گاندھی بھون میں ایک پریس کانفرنس سے  خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی۔ اس موقع پر قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل مسٹر محمد علی شبیر رکن قانون ساز کونسل مسٹر پی سدھاکر ریڈی اور تلنگانہ این ایس یو آئی کے صدر مسٹر بی وینکٹ بھی موجود تھے۔ کیپٹن اتم کمار ریڈی نے کہاکہ علحدہ تلنگانہ ریاست میں طلبہ کا مستقبل تابناک ہونے کی امیدیں کی جارہی تھی۔ تاہم ٹی آر ایس حکومت نے اپنی غلط پالیسیوں سے طلبہ برادری کو مایوس کرنے کے ساتھ ساتھ تعلیمی شعبہ کو بحران کی نذر کردیا ہے۔ کانگریس نے غریب طلبہ کو اعلیٰ تعلیم مفت فراہم کرنے کے مقصد سے فیس ریمبرسمنٹ اسکیم متعارف کراتے ہوئے اس پر کامیابی سے عمل کیا، جس سے کئی غریب خاندانوں میں علم کا چراغ روشن ہوا تھا اور سماج کے تمام طبقات میں تعلیمی رجحان بڑھا تھا۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے خانگی ڈگری پی جی کالجس مینجمنٹس اسوسی ایشن کے نمائندوں نے ان سے ملاقات کی ہے اور گذشتہ سال کے فیس ریمبرسمنٹ بقایا جات 2140 کروڑ روپئے حکومت کی جانب سے ابھی تک جاری نہ کرنے کی شکایت کی ہے اور ساتھ ہی کالجس میں تدریس و غیرتدریس سے وابستہ ڈھائی لاکھ عملے کو گذشتہ 4 ماہ سے تنخواہوں کی عدم ادائیگی کیلئے اپنی مجبوریوں کو پیش کیا ہے۔ صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی نے کہا کہ چیف منسٹر کے سی آر نے گذشتہ اسمبلی اجلاس میں 30 اپریل 2016ء تک 2014-15ء اور 2015-16ء کے 3068 کروڑ روپئے کے بقایہ جات جاری کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ تاہم صرف 928 کروڑ روپئے جاری کئے گئے جس میں 178 کروڑ روپئے ہی کالجس کو ملے ہیں۔ 3200 تعلیمی اداروں کو فیس ریمبرسمنٹ کی عدم ادائیگی سے ایک طرف طلبہ دوسری طرف تعلیمی ادارے نقصانات کا شکار ہیں اور ریاست میں تعلیمی بحران پیدا ہونے کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔ کیپٹن اتم کمار ریڈی نے کہا کہ فیس ریمبرسمنٹ کی عدم اجرائی کی وجہ سے تعلیم مکمل کرنے والے طلبہ کو کالجس انتظامیہ کی جانب سے سرٹیفکیٹس دینے سے انکار کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جن کنٹراکٹ سے معمول وصول ہورہا ہے انہیں ماہانہ فنڈز جاری کئے جارہے ہیں۔ طلبہ کیلئے فنڈز کی اجرائی میں ٹال مٹول کی پالیسی اپنائی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT