Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے آبی پراجکٹس کے خلاف کرنول میں جگن موہن ریڈی کی بھوک ہڑتال کا آغاز

تلنگانہ کے آبی پراجکٹس کے خلاف کرنول میں جگن موہن ریڈی کی بھوک ہڑتال کا آغاز

صدر وائی ایس آر کانگریس کا نیا تنازعہ ، ہند ۔ پاک سے جوڑنے کی کوشش ، تنازعہ کے حل پر زور
حیدرآباد ۔ 16 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : صدر وائی ایس آر کانگریس پارٹی جگن موہن ریڈی نے پانی کے مسئلہ کو ہند پاک سے جوڑتے ہوئے ایک نیا تنازعہ پیدا کردیا ہے ۔ اگر تنازعات کو فوری حل نہیں کیا گیا تو حالت تشویشناک ہوجانے کا انتباہ دیا ہے ۔ تلنگانہ میں تعمیر ہونے والے پالمور ، رنگاریڈی ، ڈنڈی پراجکٹس کے خلاف آج سے کرنول میں جگن موہن ریڈی نے سہ روزہ احتجاجی بھوک ہڑتال کا آغاز کیا ہے ۔ اس پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے جگن موہن ریڈی نے تنازعات پیدا کرنے کے معاملے میں اپنے والد ڈاکٹر راج شیکھر ریڈی کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے ۔ 2009 کے عام انتخابات میں پہلے مرحلے میں علاقہ تلنگانہ میں رائے دہی منعقد ہوئی تھی ۔ رائے دہی مکمل ہونے سے قبل ڈاکٹر راج شیکھر ریڈی نے آندھرا پہونچ کر کہا تھا کہ اگر علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل پاتی ہے تو حیدرآباد جانے کے لیے آندھرا والوں کو علحدہ پاسپورٹ اور ویزا حاصل کرنا پڑے گا ۔ علحدہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے بعد ٹی آر ایس حکومت تلنگانہ کے مفادات کا تحفظ کرنے کے لیے آبپاشی پراجکٹس تعمیر کررہی ہے اور موجودہ ڈیزائن میں تبدیلی لارہی ہے ۔ جس کے خلاف جگن موہن ریڈی نے ’ جلایگنیہ ‘ کے نام سے سہ روز احتجاجی دھرنے کا آغاز کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے آبپاشی پراجکٹس سے کرنول کے علاوہ علاقہ رائلسیما مزید خشک سالی کا شکار ہوجائیں گے ۔ عوام کو قطرہ قطرہ پانی کے لیے ترسنا پڑے گا ۔ آندھرا اور تلنگانہ کی صورتحال ہند پاک کی طرح تشویشناک ہوجائے گی ۔ پانی کے معاملے میں چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر بڑے پیمانے پر بے قاعدگیاں کرتے ہوئے ریاست آندھرا پردیش سے بہت بڑی نا انصافی کررہے ہیں اور افسوس کی بات یہ ہے کہ چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر این چندرا بابو نائیڈو تماشہ دیکھ رہے ہیں ۔ پانی کے معاملت میں آندھرا پردیش سے ہونے والی نا انصافیوں کے خلاف آواز اٹھانا بھی گوارہ نہیں کررہے ہیں اور پانی کے لیے دونوں ریاستوں کے حالت کشیدہ ہورہے ہیں انہوں نے کہا کہ ٹاملناڈو اور کرناٹک نے ابھی تک پراجکٹس تعمیر کرتے ہوئے بہہ کر آنے والے پانی کو کافی حد تک روک لیا ہے ۔ محبوب نگر میں پراجکٹس کی تعمیرات سے سری سیلم میں پانی کے بہاؤ کا سلسلہ ختم ہوجائے گا ۔ کلواکرتی پراجکٹ 25 ٹی ایم سی پر محیط تھا اس کو بڑھا کر 40 ٹی ایم سی کیا جارہا ہے ۔ پالمور ، رنگاریڈی اور ڈنڈی پراجکٹس کے ذریعہ 2 ٹی ایم سی پانی حاصل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ تقسیم ریاست کے بل میں پالمور رنگاریڈی اور ڈنڈی پراجکٹس نہ ہونے کا دعویٰ کیا گیا جگن موہن ریڈی نے کہا کہ دریائے کرشنا اور گوداوری پر چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر پر من مانی فیصلے کرتے ہوئے آندھرا پردیش کو نقصان پہونچانے کا الزام عائد کیا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT