Sunday , September 24 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے اردو شعراء اور ادیبوں کو وظائف و ہیلت کارڈس کا اعلان

تلنگانہ کے اردو شعراء اور ادیبوں کو وظائف و ہیلت کارڈس کا اعلان

قلی قطب شاہ اسٹیڈیم میں کل ہند اردو کتاب میلہ کا افتتاح، ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کا خطاب
حیدرآباد۔/12ڈسمبر، ( سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے تلنگانہ میں اردو شعراء اور ادیبوں کیلئے وظائف اور ہیلت کارڈ کی اجرائی کا اعلان کیا ہے۔ قلی قطب شاہ  اسٹیڈیم میں آج شام 19ویں کل ہند اردو کتاب میلہ کا افتتاح عمل میں آیا۔ قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نے تلنگانہ اردو اکیڈیمی کے اشتراک سے اس کا اہتمام کیا ہے۔ افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر نے اردو اکیڈیمی کو ہدایت دی کہ وہ تلنگانہ کے شعراء اور ادیبوں کی فہرست تیار کرے تاکہ انہیں ہیلت کارڈ کی اجرائی کے انتظامات کئے جاسکیں۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ حکومت اردو زبان کی ترقی اور ترویج کے سلسلہ میں سنجیدہ ہے اور اس کے لئے جامع منصوبہ تیار کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اردو شعراء اور ادیبوں کی سرپرستی حکومت کا فرض ہے اور عمر کے آخری حصہ میں شعراء اور ادیبوں کو علاج معالجہ کیلئے ہیلت کارڈ کی اجرائی کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ انہیں ضروری اخراجات کی تکمیل کیلئے ماہانہ وظیفہ دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ ریاست میں فلاحی اور ترقیاتی اسکیمات پر عمل آوری کیلئے بجٹ کی کوئی کمی نہیں ہے اور آئندہ مالیاتی سال اقلیتی بہبود کے بجٹ میں مزید اضافہ کیا جائے گا۔ محمود علی نے حیدرآباد میں اردو کتاب میلہ منعقد کرنے پر قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کو مبارکباد پیش کی اور کہا کہ گزشتہ 56برس سے متحدہ آندھرا پردیش میں اردو زبان کے ساتھ ناانصافی کی گئی، آندھرائی حکمرانوں نے کبھی بھی اردو کی ترقی پر توجہ نہیں کی۔ انہوں نے اس سلسلہ میں سابق چیف منسٹر چندرا بابو نائیڈو کا ایک واقعہ سنایا۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کے بعد ملک میں اردو کے ساتھ ناانصافی کی گئی اور پنجاب اور ہریانہ جیسے علاقے جہاں اردو عام تھی وہاں اردو کی جگہ ہندی کو رائج کردیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں اردو اکیڈیمی کا بجٹ کافی کم ہے اور وہ اس سے مطمئن نہیں ہیں۔ آئندہ سال اردو اکیڈیمی کے بجٹ میں اضافہ  کرتے ہوئے فروغ اردو کی مختلف اسکیمات شروع کی جائیں گی۔ انہوں نے بتایا کہ اپوزیشن میں رہ کر انہوں نے شعراء اور ادیبوں کے مسائل کی یکسوئی کیلئے احتجاج میں حصہ لیا تھا۔ اب جبکہ ٹی آر ایس حکومت برسراقتدار آچکی ہے وہ چاہتے ہیں کہ ہر طرح سے مدد اور حوصلہ افزائی کی جائے۔ چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ کو مسلم دوست اور اردو کے قدرداں قرار دیتے ہوئے محمود علی نے کہا کہ چندر شیکھر راؤ اردو کے دلدادہ ہیں اور انہوں نے خواہش کی تھی کہ اردو لکھنے اور پڑھنے کیلئے ایک ٹیچر کا انتظام کیا جائے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ اردو کے ایک شاعر شاداب بے دھڑک مدراسی جو چیف منسٹر کے قریبی دوست ہیں ان سے تقریباً پانچ چھ ماہ تک کے سی آر نے اردو زبان سیکھی ہے۔ انہوں نے اردو زبان میں سائنسی اور دیگر موضوعات پر کتابوں کی اشاعت کی ستائش کی اور کہا کہ نوجوان نسل کو عصری عنوانات پر اردو میں کتابیں فراہم کی جانی چاہیئے۔ وقت کی ضرورت ہے کہ ریاست میں تلگو اور انگریزی زبان کے ساتھ نئی نسل اردو سے خود کو وابستہ کرے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست کے تمام خانگی مدارس میں اردو کو بحیثیت مضمون شامل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور اس سلسلہ میں جلد احکامات جاری کئے جائیں گے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے حیدرآباد میں بہت جلد عالمی اردو کانفرنس کے انعقاد کا اعلان کیا۔ کونسل برائے فروغ اردو زبان کے نائب صدرنشین مظفر حسین نے کونسل کی کارکردگی کی تفصیلات بیان کی۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں اردو زبان کا مستقبل تابناک ہے کیونکہ نئی نسل اردو کے ساتھ جڑی ہوئی ہے۔ مظفر حسین نے کہا کہ ملک کے دیگر علاقوں کی طرح حیدرآباد میں اردو کتاب میلہ کا مقصد اردو زبان کا فروغ ہے۔ انہوں نے کونسل کی جانب سے کتاب میلہ کے دوران مختلف تہذیبی اور ثقافتی  پروگراموں کے انعقاد کا حوالہ دیا۔ کونسل کے ڈائرکٹر پروفیسر ارتضیٰ کریم نے حیدرآباد میں اردو زبان کے فروغ اور ترقی کی ستائش کی اور امید ظاہر کی کہ تلنگانہ حکومت اردو کے ساتھ انصاف کرے گی۔ انہوں نے ڈپٹی چیف منسٹر محمود علی کی ستائش کی اور اردو زبان کی ترقی اور فروغ کے بارے میں ان کے خیالات اور عزائم کو سراہا۔ ڈائرکٹر تلنگانہ اردو اکیڈیمی پروفیسر ایس اے شکور نے خیرمقدم کیا اور بتایا کہ 2010میں حیدرآباد میں کتاب میلہ منعقد کیا گیا تھا۔ 20ڈسمبر تک قلی قطب شاہ اسٹیڈیم میں کتاب میلہ جاری رہے گا جس میں ملک کے علاقوں کے 136 ناشرین نے اپنے اسٹالس قائم کئے ہیں۔ 19ڈسمبر تک روزانہ مختلف کلچرل پروگرامس منعقد کئے جائیں گے جس میں شام غزل و مشاعرہ بھی شامل رہے گا۔ اس موقع پر ڈپٹی چیف منسٹر نے انگلش اردو ڈکشنری کی رسم اجراء انجام دی جس کے ایڈیٹر نجم السحر ہیں۔

TOPPOPULARRECENT