Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے ایم ٹی ایمس کو اپ گریڈ کرنے مزید ایک ماہ درکار

تلنگانہ کے ایم ٹی ایمس کو اپ گریڈ کرنے مزید ایک ماہ درکار

کرنسی تنسیخ کے بعد سافٹ ویر اور سنسر کی تبدیلی ضروری ، وقت پر رقم نہ ملنے سے عوام میں ناراضگی
حیدرآباد ۔ 28 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ کے 11 ہزار اے ٹی ایم کو نئے سافٹ ویر اور سنسر سے اپ گریڈ کرنے کے لیے مزید ایک ماہ درکار ہوگا ۔ صرف 20 فیصد اے ٹی ایم ہی ابھی تک اپ گریڈ ہوئے ہیں ۔ جس میں زیادہ تر شہر حیدرآباد میں ہیں ۔ تلنگانہ کے اے ٹی ایم میں منسوخ شدہ بڑی نوٹوں کا سافٹ ویر ہے جو 10 نومبر سے ناکارہ ہوچکا ہے ۔ 2 ہزار اور 500 کی جاری کردہ نوٹوں کی سائز اور وزن کم ہے جس کی وجہ سے اے ٹی ایم میں ان کا استعمال مشکل ہوگیا ہے ۔ شہر حیدرآباد سکندرآباد کے علاوہ ریاست کے مختلف علاقوں یہاں تک کہ ایرپورٹ پر بھی اے ٹی ایم بند پڑے ہیں یا نوکیاش کے بورڈ آویزاں کردئیے گئے ہیں ۔ انہیں مکمل کارآمد بنانے کے لیے کم از کم ایک ماہ کا وقت لگے گا ۔ بینکوں میں رقم نہ ہونے کی دو وجوہات ہیں سب سے پہلے سافٹ ویر اور سنسر دونوں تبدیل کرنا ہے ۔ تب تک نئی کرنسی اے ٹی ایم سے نکالنا مشکل ہے ۔ شہر میں 20 فیصد اے ٹی ایم کا سافٹ ویر تبدیل کیا گیا ہے ۔ ماباقی اے ٹی ایم کا سافٹ ویر تبدیل کرنے میں عملے کی قلت پائی جاتی ہے ۔ نصف شب کو اے ٹی ایم میں رقم بھری جاتی ہے ۔ تاہم 500 اور 1000 روپئے کے نوٹوں کی منسوخی کے بعد عوام دن رات اے ٹی ایم سنٹرس کے سامنے قطاروں میں موجود ہیں ۔ نقد رقم وقت پر نہ ملنے کی وجہ سے ناراض ہے ۔ ان کے سامنے نوٹ بھرنے پر سیکوریٹی مسائل پیدا ہونے کے خدشات ہیں ۔ پولیس کا تعاون حاصل کرتے ہوئے 50 اور 100 روپئے کے نوٹ اے ٹی ایم سنٹرس میں بھرے جارہے ہیں ۔ دیہی علاقوں میں اے ٹی ایم مکمل بند پڑے ہیں ۔ دیہی علاقوں کے عوام بینک اور پوسٹ آفسوں پر مکمل انحصار کیے ہوئے ہیں ۔ اے ٹی ایم کا سافٹ ویر تبدیل کرنے کا عملہ اپنی ساری توجہ شہر حیدرآباد پر مرکوز کیا ہوا ہے ۔ اس کے بعد وہ دوسرے شہروں اور اضلاع ہیڈ کوارٹرس پر توجہ دے گا ، پھر منڈل اور دیہی علاقوں کے اے ٹی ایم کا سافٹ ویر تبدیل کیا جائے گا ۔۔

TOPPOPULARRECENT