Thursday , September 21 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے مزید گرام پنچایت، ای پنچایتوں میں تبدیل

تلنگانہ کے مزید گرام پنچایت، ای پنچایتوں میں تبدیل

حیدرآباد۔/15جون، ( سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ میں مزید 500 گرام پنچایتوں کو بہت جلد ای پنچایتوں میں تبدیل کی جائے گا۔ آج یہاں ڈیجیٹل خواندگی حاصل کرنے والے تین سرپنچوں کو ایوارڈز عطا کرتے ہوئے اس سلسلہ میں منعقدہ تقریب کے موقع پر وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی مسٹر کے ٹی راما راؤ نے اس بات کا اظہار کیا اور کہا کہ الیکٹرانکس اشیاء کی تیاری کے شعبہ میں زبردست ترقی حاصل کی گئی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس شعبہ میں بڑے پیمانے پر سرمایہ داری کرنے کیلئے صنعت کار پہل کررہے ہیں۔وزیر موصوف نے اس موقع پر انفارمیشن ٹکنالوجی محکمہ کی سالانہ کارکردگی پر مشتمل رپورٹ جاری کی۔ مسٹر کے ٹی راما راؤ نے پرزور الفاظ میں کہا کہ ٹی ھب کے تعلق سے ستائش کا سلسلہ مسلسل جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے دورہ امریکہ کے موقع پر یو ایس سلیکان ویلی میں بھی ٹی ھب نے زبردست ستائش حاصل کی۔ وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی نے مزید کہا کہ ریاست تلنگانہ میں انفارمیشن ٹکنالوجی شعبہ کو زبردست ترقی حاصل ہوگی اور آئندہ دنوں میں ریاست تلنگانہ میں انفارمیشن ٹکنالوجی شعبہ میں زبردست سرمایہ کاری کی جائے گی کیونکہ ہر کوئی ریاست تلنگانہ میں آئی ٹی صنعتوں کے قیام سے خصوصی دلچسپی رکھتے ہیں۔

 

فلم کی آخریِ ریل میں چندرا بابو فاتح اور کلائمکس میں ویلن جگن :ڈی اوما کا ریمارک
حیدرآباد۔15 جون ( سیاست نیوز) فلم کی آخریِ ریل میں چندرا بابو نائیڈو فاتح کے طور پر ابھرے ہیں اور کلائمکس میں جیل جانے والے ویلن جگن موہن ریڈی ہیں۔ یہ ریمارکس آندھراپردیش کے وزیر آبپاشی ڈی اوما مہیشور راؤ نے وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے سربراہ جگن موہن ریڈی کے ریمارکس کے جواب میں کئے ہیں۔ جگن نے چندرا بابو کو ویلن قرار دیا تھا ۔آج میڈیا سے بات کرتے ہوئے اوما مہیشور راؤ نے ان کے اس ریمارک پر برہمی ظاہر کی اور کہا کہ فلم کی 13ویںِریل میں جگن ویلن ہیں ‘ پہلی ِ ریل میں جگن چنچل گوڑہ جیل گئے تھے اور آخری ِ ریل میں چندرا بابو نائیڈو کے ہیرو اور فاتح کے طور پر ابھرے ہیں۔ اوما نے کہا کہ وائی ایس آر کانگریس پارٹی کی میٹنگ میں منظورہ آٹھ قرار دادیں پارٹی کے کھوکھلے پن کو ظاہر کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے لیڈروں کی جانب سے اصطلاحات سماج کیلئے ناقابل قبول ہے ۔واضح رہے کہ جگن موہن ریڈی نے ریاست میں غلط حکمرانی کا الزام لگاتے ہوئے چندرا بابو کو ویلن قرار دیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT