Thursday , July 27 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے نئے اضلاع کی مرکزی گزٹ میں شمولیت کا مسئلہ

تلنگانہ کے نئے اضلاع کی مرکزی گزٹ میں شمولیت کا مسئلہ

حکومت کے اعلامیہ کی عدم اجرائی سے امداد کا حصول مشکل ، ترقیاتی کاموں میں تاخیر
حیدرآباد۔14فروری(سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ کے نئے اضلاع کو گزٹ میں شامل کرنے کیلئے مرکزی حکومت کے اعلامیہ کی عدم اجرائی ریاستی حکومت کی مرکز سے امداد طلبی میں رکاوٹ تصور کی جا رہی ہے۔ریاستی حکومت نے ریاست کے اضلاع کی تقسیم اور نئے اضلاع کی تشکیل کے لئے اعلامیہ جاری کئے ہوئے 4ماہ کا عرصہ گذر چکا ہے اور اس عمل کے متعلق مرکزی حکومت کے تمام متعلقہ محکمہ جات کو واقف کروا دیا گیا ہے لیکن اس کے باوجواب تک بھی ان اضلاع کو گزٹ میں شامل نہ کئے جانے کے سبب ریاست کو اضافی آئی اے ایس عہدیداروں کی فراہمی ممکن نہیں ہو پارہی ہے اور اسی وجہ سے حکومت کو انتظامی حالات کو بہتر بنانے میں دشواریاں پیش آنے لگی ہیں ۔ ریاستی حکومت نے مرکزی حکومت سے خواہش کی ہے کہ ریاست کو مزید 40آئی اے ایس عہدیدار فراہم کئے جائیں لیکن نئے اضلاع کی تشکیل کو گزٹ میں شامل نہ کئے جانے کے سبب ایسا نہیں کیا جا سکتا ہے۔علاوہ ازیں ریاستی حکومت مرکز کی جانب سے پسماندہ اضلاع کے فنڈس میں اضافی امداد کے حصول کیلئے کوششیں کی جا رہی ہیں لیکن ان میں بھی تلنگانہ کو ناکامی کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ ریاست تلنگانہ کے 9اضلاع کو پسماندہ قرار دیتے ہوئے ان کیلئے سالانہ 50کروڑ روپئے جاری کئے جا رہے ہیں۔اضلاع کی تعداد میں اضافہ کے متعلق حکومت نے جو منصوبہ تیار کیا تھا اس کے مطابق ریاستی حکومت نے تمام اضلاع میں نوودیا اسکول حاصل کرنے کی کوشش کی تھی لیکن اس کوشش کو بھی کامیابی حاصل نہیں ہو پا رہی ہے۔ ریاست تلنگانہ میں ابھی 110آئی اے ایس عہدیدارخدمات انجام دے رہے ہیں ۔ریاستی حکومت نے 21اضلاع کے اضافہ کے ساتھ نئے اضلاع کی تشکیل کا اعلامیہ جاری کیا تھا لیکن مرکزی حکومت نے گزٹ میں شامل نہ کرتے ہوئے ریاستی حکومت کی مجوزہ درخواستوں کی راہ میں رکاوٹیں پیدا کردی ہیں۔بتایاجاتا ہے کہ ریاستی حکومت نے مرکزی وزارت فینانس ‘ وزارت داخلہ ‘ محکمہ پرسونل اینڈ ٹریننگ کے علاوہ وزارت فروغ انسانی وسائل کو بھی ریاست تلنگانہ میں اضلاع کی تشکیل جدیدسے واقف کروادیا گیا ہے۔ مسٹر اروند کمار اور خصوصی نمائندے مسٹرایس وینو گوپال چاری کو اس خصوص میں نمائندگی کی ہدایت دی گئی ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT