Sunday , July 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کے 27 شہری علاقوں میں ماسٹر پلان پر عمل آوری کی مساعی

تلنگانہ کے 27 شہری علاقوں میں ماسٹر پلان پر عمل آوری کی مساعی

جون 2018 تک پلان 2 کی تیاری ، ترقی کے منصوبوں پر غور و خوض
حیدرآباد۔21اپریل (سیاست نیوز) ریاست کے شہری علاقو ںکے ماسٹرپلان 2 جون 2018سے قبل تیار کرلئے جائیں تاکہ ان ماسٹر پلانس کے ذریعہ شہری علاقوں کی مجموعی اور منصوبہ بند ترقی کو ممکن بنانے کے اقدامات کئے جا سکیں۔ بتایا جاتا ہے کہ ڈائرکٹوریٹ آف ٹاؤن اینڈ کنٹری پلاننگ کی جانب سے دی گئی ہدایات کے مطابق ریاست تلنگانہ کے تمام شہری علاقوں کی مکمل تفصیل معہ ماسٹر پلان روانہ کرنی ہوں گی جس کے ذریعہ مکمل نقشہ جات تیار کرتے ہوئے انہیں آن لائن رکھا جائے گا۔ وزارت بلدی نظم و نسق و شہری ترقیات کے بموجب اس منصوبہ کا مقصد شہری علاقوں کی منصوبہ بند ترقی کو ممکن بنانے کے ساتھ ساتھ شہری علاقوں میں بہتر تجارت کے مواقع پیدا کرتے ہوئے انہیں ترقی کی راہ پر گامزن کرنا ہے۔ باوثوق ذرائع سے موصولہ اطلاعات کے مطابق شہری علاقوں کی اس جامع منصوبہ بندی کے بعد ان نقشہ جات کو ڈپارٹمنٹ اور آف انڈسٹریل پروموشن اینڈ پالیسی کے حوالہ کیا جائے گا اور اس منصوبہ کو عملی جامہ پہنانے کیلئے تیار کردہ ماسٹر پلان اور حکمت عملی کے ساتھ ساتھ نقشہ جات کو قطعیت دیتے ہوئے انہیں ڈائرکٹوریٹ آف ٹاؤن اینڈ کنٹری پلاننگ کے حوالے کیا جائے گا۔ حکومت کی جانب سے تیار کردہ منصوبہ کے مطابق ریاست تلنگانہ کے شہری علاقوں کو حیدرآباد اور ورنگل زمرے میں منقسم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔حیدرآبادکے تحت جن علاقوںکو ماسٹر پلان میں شامل رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ان شہری علاقوں میں بودھن‘ گدوال‘ کاماریڈی ‘ محبوب نگر‘ مریال گوڑہ‘ میدک‘ نلگنڈہ ‘ نارائن پیٹ‘ سداسیوپیٹ‘ سدی پیٹ ‘ سوریہ پیٹ‘ تانڈور ‘ وقارآباد ‘ ونپرتی کے علاوہ ظہیرآباد شامل ہیں اسی طرح اس منصوبہ کے تحت ورنگل میں عادل آباد‘ بھینسہ ‘ جگتیال‘ جنگاؤں‘ کاغذ نگر ‘ کورٹلہ ‘ کوتھا گوڑم‘ منچریال‘ سرسلہ ‘ مندامری‘ پلوانچہ‘ میٹ پلی‘ اور کریم نگر کو شامل رکھا گیا ہے۔عہدیداروں کے مطابق ریات میں موجود 73شہری علاقوں میں 14علاقے شہری ترقیات کے تحت آتے ہیں اور پہلے مرحلہ میں 32علاقوں کو شہری ترقیات کے تحت لانے کی حکمت عملی تیار کی جا رہی ہے ۔ محکمہ جاتی عملہ کا کہنا ہے کہ 27شہری علاقوں میں ماسٹر پلا ن پر عمل آوری اور تیاری کا سلسلہ شروع کیا جا چکا ہے اور اس منصوبہ کو جلد از جلد تیار کرنے پر زور دیا جا رہا ہے۔ ریاست تلنگانہ میں کئے جانے والے ان اقدامات کا راست فائدہ شہری علاقوں کی ترقی میں نظر آسکے گا کیونکہ ان علاقوں کی جامع منصوبہ بند ترقی کا سلسلہ شروع ہونے کے بعد یہ علاقے عالمی سطح پر مقبولیت حاصل کر سکیں گے۔شہری ترقیات کے سلسلہ میں تیار کئے جا رہے منصوبہ کے متعلق بتایا جاتا ہے کہ شہری علاقوں میں 48فیصد اراضیات رہائشی مقاصد کیلئے استعمال کی جائیں گی جبکہ آبادی کے تناسب کے اعتبار سے علاقوں کو منقسم کیا جائے گا اسی طرح 3.1فیصد اراضی کو تجارتی اغراض کیلئے مختص کیا جائے گااور 10.3فیصد اراضیات صنعتی مقاصد کیلئے استعمال کی منصوبہ بندی کی جائے گی۔ عوامی پارک و غیرہ کیلئے 6.2فیصد جگہ کی تخصیص کا منصوبہ تیار کیا جائے گا۔ اسی طرح حمل و نقل اور سڑک وغیرہ کیلئے 14.2فیصد جگہ مختص کی جائے گی۔ عبادتگاہوں اور دفاتر وغیرہ کیلئے عوامی مقامات 6.2فیصد ہوں گے۔ حکومت کی جانب سے اس منصوبہ سازی اور ماسٹر پلان کی تیاری کیلئے 2جون 2018تک کی مہلت دی گئی ہے تاکہ اس مہلت سے قبل منصوبہ جات و تجاویز موصول ہونے کے فوری بعد شہری ترقیات کی جانب سے کاروائی کا آغاز کیا جا سکے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT