Sunday , August 20 2017
Home / کھیل کی خبریں / تمغہ نہ ملنے پر منگولیائی ریسلنگ کوچز کا نیم برہنہ احتجاج

تمغہ نہ ملنے پر منگولیائی ریسلنگ کوچز کا نیم برہنہ احتجاج

ریو دی جنیرو ، 22 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) ریو اولمپکس میں ریسلنگ کے مقابلوں کے دوران برونز میڈل کیلئے منعقدہ میچ میں منگولیا کے دو کوچز نے آفیشلز کے فیصلے کے خلاف کپڑے اتار کر انوکھا احتجاج کیا۔ اس تمام تنازعہ کا آغاز اس وقت ہوا جب ازبکستان کے اختیور نوروزو کو اتوار کے میچ میں 65kg کیٹگری میں منداخ نارن گنزورگ کے ہاتھوں 6-7 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ لیکن ازبک ریسلر نے فوری طور پر اس فیصلے کو چیلنج کردیا، جہاں ان کا ماننا تھا کہ مقابلے کے اختتام سے دس سکنڈ پہلے ان کے حریف نے لڑنے کے بجائے اپنی فتح کا جشن منانا شروع کردیا تھا۔ ان کا یہ چیلنج درست قرار پایا اور یوں انہوں نے چیلنج اور میچ دونوں میں فتح حاصل کر کے برونز میڈل بھی جیت لیا۔ اپنی فتح کا جشن منانے والے گنزورگ اس موقع پر مایوسی کے عالم میں گھٹنوں کے بل بیٹھ گئے۔ تاہم اس فیصلے پر برہم منگولین کوچز نے شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے احتجاجاً اپنی شرٹ اور جوتے اتار کر آفیشلز کے سامنے پھینک دیئے جبکہ ایک کوچ نے تو اپنے انڈرویئر کے سواء سب کچھ ہی اتار دیا۔ اس موقع پر برازیلی شائقین نے بھی منگولیا، منگولیا کے نعرے لگانے شروع کردیئے۔ کوچ نے کہا کہ یہ احتجاج تھا کیونکہ میچ کا فیصلہ کرتے ہوئے غلطی کی گئی۔ منگولیا کے 30 لاکھ عوام اس برونز میڈل کے منتظر تھے اور اب ہمارے پاس کوئی میڈل نہیں۔ کوچ بیارا نے کہا کہ ریفری اہل نہیں تھے اور وہ صرف ازبکستان کی حمایت کر رہے تھے۔

TOPPOPULARRECENT