Sunday , July 23 2017
Home / Top Stories / تھریسامے کا نئی حکومت بنانے کا اعلان

تھریسامے کا نئی حکومت بنانے کا اعلان

سادہ اکثریت سے محرومی کے باوجود بکنگھم میں ملکہ سے ملاقات
لندن ۔ 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) برطانوی وزیراعظم تھریسامے نے اعلان کیا ہے کہ وہ حالیہ انتخابات میں سادہ اکثریت حاصل نہ کرنے کے باوجود نئی حکومت بنا رہی ہے۔ تھریسامے  کا کہنا ہے کہ برطانیہ کے یورپی یونین چھوڑنے کے حوالے سے اہم مذاکرات دس روز بعد مقرر کردہ وقت پر ہی شروع ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ شمالی آئرلینڈ کی سیاسی جماعت ڈیموکریٹک یونینسٹ پارٹی کے ساتھ خاص طور پر کام کریں گی۔دوسری جانب ڈی یو پی کی رہنما ارلین فوسٹر نے کہا ہے کہ انھوں نے کنزرویٹیوز کے ساتھ بات چیت کی حامی بھر لی ہے جس میں موجودہ وقت میں برطانیہ میں استحکام قائم رکھنے کی راہ تلاش کی جائے گی۔ڈی یو پی کی جانب سے جاری کردہ مختصر پیغام میں انھوں نے کہا کہ ان کی جماعت پورے برطانیہ اور شمالی آئرلینڈ کے مفادات کے بارے میں فکرمند ہے۔تاہم اس بارے میں واضح نہیں کہ ڈی یو پی ٹزیزا مے کی حکومت کو کیا مدد فراہم کرے گی اور اس کے مطالبات کیا ہوں گے۔اس سے قبل وزیراعظم تھریسامے نے دارالعوام میں اکثریت کا ملنے کے باوجود بکنگھم پیلس میں ملکہ برطانیہ سے حکومت سازی کے لیے اجازت طلب کی تھی۔ اطلاعات کے مطابق تھریسامے  کی بکنگھم پیلس میں ملکہ کے ساتھ ملاقات 20 منٹ جاری رہی۔ ملاقات کے بعد وہ واپس ڈاؤننگ سٹریٹ روانہ ہو گئیں جہاں انھوں نے پریس بریفنگ میں کہا کہ وہ حکومت سازی کر رہی ہیں اور ان کی حکومت بے یقینی کو ختم کرے گی اور ملک کو محفوظ بنانے کے لیے کام کرے گی۔ تھریسامے  کا کہنا تھا کہ کنزرویٹو اور ڈی یو پے مل کر کام کریں گے اور کئی سالوں سے دونوں جماعتوں کے خاص تعلقات ہیں۔ تھریسامے نے وعدہ کیا کہ وہ دس روز میں شروع ہونے والے بریگزٹ مذاکرات میں ملک کے مفادات کا تحفظ کریں گی اور برطانوی عوام کی رائے کا احترام کرتے ہوئے برطانیہ کو یورپی یونین سے نکالیں گی۔ان کو امید ہے کہ شمالی آئر لینڈ کے ڈیموکریٹک یونینسٹ (ڈی یو پی) ان کی حمایت کریں گے۔اس وقت صرف ایک نشست کا نتیجے کا اعلان ہونا باقی رہ گیا ہے۔ کنزرویٹو جماعت 326 نشستوں سے آٹھ کم ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT