Monday , September 25 2017
Home / ہندوستان / جئے پور کی ہوٹل میں اجتماعی عصمت ریزی کا واقعہ

جئے پور کی ہوٹل میں اجتماعی عصمت ریزی کا واقعہ

ملازمت کا جھانسہ دے کر دہلی کی نابالغ لڑکی کو فروخت کر دیا گیا
نئی دہلی ۔ 7 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام) جئے پور کی ایک ہوٹل میں 10 افراد نے ایک 17 سالہ لڑکی کی اجتماعی عصمت ریزی کر دی ۔ بیرون دہلی کے علاقہ منگول پوری کی ساکن اس لڑکی کو پڑوسی میں مقیم ایک جوڑا ملازمت کا جھانسہ دے کر وہاں لے گیا تھا ۔ تاہم اس واقعہ کے اندرون 24 گھنٹے ہوٹل سے فرار ہو کر یہ لڑکی دہلی واپس ہوگئی اور مقامی پولیس کو اس معاملہ کی اطلاع دی ۔ ڈی سی پی ( آوٹر) وکرم جیہ سنگھ نے بتایا کہ اس واقعہ کے سلسلہ میں 6 افراد کو گرفتار کرلیا گیا ۔ جبکہ اس واقعہ میں ملوث مزید افراد کی نشاندہی نہیں ہوسکی ۔ پولیس نے بتایا کہ متاثرہ لڑکی کو ملازمت کی اشد ضرورت تھی اور وہ پڑوسی میں مقیم ایک جوڑے سے راکی اور رانی سے رجوع ہوئی تھی اس جوڑے کا دعوی کیا کہ دہلی اور قریبی شہروں میں سینکڑوں خواتین کو ملازمتیں فراہم کی ہیں ۔ جنہوں نے 30 اگسٹ کے دن اس لڑکی کو جئے پور لیجا کر ایک ہوٹل میں محروس کرایا ۔ اور ہوٹل کے منیجر اور اس کے ساتھیوں نے لڑکی کی مسلسل عصمت ریزی  کرتے رہے ۔ جہاں سے وہ فرار ہو کر 31 اگسٹ کو بذریعہ بس دہلی واپس آئی ۔ اور منگول پوری پولیس اسٹیشن میں اس واقعہ کی شکایت درج کروائی ۔ پولیس نے بعدازاں دھوکہ باز جوڑے راکی اور رانی کو گرفتار کرلیا  جس نے یہ اقبال جرم کیا کہ اس لڑکی کو جئے پور میں فروخت کردیا گیا تھا ۔ دہلی پولیس کی ایک ٹیم جئے پور پہنچ کر دیگر ملزمین کو بھی حراست میں لے لیا ہے ۔ تحقیقات میں پتہ چلا کہ جس میں ہوٹل میں عصمت ریزی کا واقعہ پیش آیا ہے  وہاں پر جسم فروشی کا اڈہ چلایا جاتا ہے ۔ بتایاجاتا ہے کہ اس لڑکی باپ ترکاری فروش اور شراب کا عادی ہے جس کے باعث گھریلو ضروریات کی تکمیل کے لئے اس لڑکی کو ملازمت کی ضرورت تھی جس کی تلاش میں دھوکہ بازوں کے چنگل میں پھنس گئی ۔ پولیس نے مفرور دیگر ملزمین کو پکڑنے کے لئے ہوٹل کے سی سی ٹی کے فوٹیج حاصل کرلئے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT