Monday , May 22 2017
Home / ہندوستان / جئے پور کی ہوٹل میں گائے کے گوشت کے شبہ پر گاؤ رکھشکوں کا حملہ

جئے پور کی ہوٹل میں گائے کے گوشت کے شبہ پر گاؤ رکھشکوں کا حملہ

جئے پور 20 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) گاؤ رکھشکوں نے ایک ہوٹل کو 6 گھنٹے تک بند رکھا جب ایسی اطلاعات ملیں کہ بیرون ہوٹل کچرے کے انبار میں گائے کا گوشت پایا گیا۔ یہ اتوار کی نصف شب کے قریب کی بات ہے کہ بڑی تعداد میں پولیس کو جئے پور کے کانتی نگر میں واقع ہوٹل کے قریب تعینات دیکھا گیا جو گاؤ رکھشکوں کی جانب سے وہاں حملے کے پیش نظر پہونچے تھے۔ زائداز 6 گھنٹے اِس گلابی شہر میں 100 افراد سے زیادہ کے ہجوم نے ہوٹل حیات ربانی کے روبرو زبردست احتجاج کیا کیوں کہ اُس ہوٹل میں بیف کی سربراہی کے الزامات سامنے آئے تھے۔ یہ خود ساختہ رکھشک ہیں جو ’’بھارت ماتا کی جئے‘‘ اور ’’نریندر مودی زندہ باد‘‘ کے نعرے بلند کررہے تھے۔ مقامی کونسلر بی جے پی کی نرملا شرما کو وہاں سرگرم دیکھا گیا جو جئے پور میونسپل کارپوریشن کے عہدیداروں کو ہدایات دے رہی تھی کہ ہوٹل کی بلڈنگ کو مہربند کردیا جائے۔ ایک احتجاجی نے تمام معاملہ کے تعلق سے پوچھنے پر جواب دیا کہ آپ کس قسم کا سوال کررہے ہو، کیا آپ نہیں سمجھتے کہ ربانی نام کی ہوٹل میں کس قسم کا گوشت سربراہ کیا جاسکتا ہے۔ کیا ہوٹل کا نام ازخود ثبوت نہیں کہ وہاں بیف کی سربراہی ہوتی ہے۔ اِس دوران جئے پور پولیس کے ڈپٹی کمشنر (ویسٹ) اشوک گپتا نے بتایا کہ ہم ہوٹل سے گوشت کا نمونہ حاصل کرچکے ہیں اور اِسے جانچ کے لئے فارنسک سائنس لیباریٹری بھیجا جائے گا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT