Tuesday , September 26 2017
Home / Top Stories / جاپان میں تباہ کن زلزلہ ، 35ہلاک ، سینکڑوں زخمی ، عمارتیں منہدم

جاپان میں تباہ کن زلزلہ ، 35ہلاک ، سینکڑوں زخمی ، عمارتیں منہدم

مٹی کے تودے گرنے سے کئی افراد زندہ دفن ہوجانے کا اندیشہ ، برقی مسدود ، سڑک اور ریل رابطے منقطع
کوماسوٹو ۔ 16 اپریل ۔(سیاست ڈاٹ کام) جنوبی جاپان میں آج دن کے دوران دو انتہائی طاقتور زلزلوں کے نتیجہ میں کم سے کم 35 افراد ہلاک ہوگئے اور منہدمہ عمارتوں کے ملبہ میں سینکڑوں افراد زندہ دفن ہوجانے کااندیشہ ہے ۔ اس دوران بڑے پیمانے پر طوفان کی پیش قیاسی سے مٹی کے تودے گرنے اور چٹان کھسکنے کے خطرات میں اضافہ ہوگیا ہے ۔ پہاڑی علاقوں میں چٹانیں کھسکنے سے سینکڑوں گھر ، سڑکیں اور ریلوے لائینس تہس نہس ہوگئے اور ہزاروں ٹن کیچڑ ہرطرف بکھرگیا۔ اس علاقہ مںے ایک وینویرسٹی کی اقامت گاہ اور اپارٹمنٹس کامپلکس کے بشمول متعدد عمارتیں کھنڈر میں تبدیل ہوگئی ہیں جہاں درجنوں افراد لاپتہ ہیں۔ کابینی چیف سکریٹری یوشی ہیڈے سوگا نے کہاکہ ’’ہم ان کئی مقامات سے واقف ہیں جہاں متعدد افراد ( ملبہ میں ) زندہ دفن ہوگئے ہیں، پولیس ، آتش فرو عملہ ، دفاعی فورسیس ان افراد کو بچانے کی ممکنہ مساعی کررہے ہیں‘‘۔ انھوں نے کہا کہ تقریباً 70,000 افراد کا تخلیہ کروایا گیا جن میں ایک بڑے باندھ کے قریب مقیم 300 افراد بھی شامل ہیں۔ صبح 7 بجے ہوئے زلزلہ کے بعد زخموں کی کثیرتعداد مقامی ہسپتال سے رجوع ہوئی ہے لیکن وہاں تاریکی کے سبب ڈاکٹروں اور مریضوں کو سخت دشواریوں کا سامنا ہے ۔ کوماسوگا ریاست کے کئی پہاڑی علاقے اور دوردراز کے گاؤں بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ زلزلہ کے بعد آندھی اور مٹی کے تودے گرنے کے سبب ان علاقوں کا ماباقی جاپان سے رابطہ منقطع ہوگیا ہے۔ مٹی کے تودے گرنے سے سڑکوں پر کیچڑ جمع ہوگیا ہے جس سے سڑک رابطے بھی منقطع ہوگئے ہیں۔ تقریباً 1000 افراد اس گاؤں میں پھنس گئے ہیں۔ کاماسوٹوکی ریاستی سرکاری ترجمان یومیکا کامی نے 35 ہلاکتوں کی توثیق کی اور کہا کہ تقریباً 1000 متاثر ہوئے ہیں جن میں 182 کی حالت تشویشناک ہے۔ ’بی بی سی ‘کے مطابق زلزلے کے بعد امدادی سرگرمیوں میں ریسکیو اداروں کے ساتھ ساتھ نیم فوجی دستوں کے 20 ہزار اہلکار بھی حصہ لے رہے ہیں۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز جنوبی جاپان میں شدید زلزلہ آیا تھا ، امریکی جیولوجیکل سروے کے مطابق اس کی شدت 7.0 تھی جبکہ جاپان کے اداروں نے زلزلے کی شدت کو 7.3 قرار دیا تھا.دو روز قبل بھی جاپان میں 6.5 شدت کے زلزلے کے باعث 9 افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے تھے، یوں 2 روز میں زلزلوں سے 44 افراد کی ہلاکت ہو چکی ہے۔جمعہ کے روز آنے والے زلزلے کے بعد جاپان میٹرولوجیکل ایجنسی نے مغربی ساحل پر واقع کیوشو جزیرے کے لیے سونامی وارننگ جاری کی تھی تاہم بعد میں اسے واپس لے لیا گیا۔کیوشو ملک کی جنوبی ریاست ہے جس کا شہر کوموماتو زلزلے سے سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے،اس کی آبادی 2 لاکھ افراد پر مشتمل ہے جبکہ اس علاقے میں 3 لاکھ 85 ہزار گھر اور دیگر عمارات ہیں، شہر کا بیشتر حصلہ زلزلے کے بعد بجلی اور گیس سے محروم ہے۔شدید زلزلے سے کیوشو میں کئی عمارات کو نقصانات پہنچا جبکہ متعدد گھروں کی چھتیں منہدم ہو گئیں۔زلزلے کی شدت اس قدر زیادہ تھی کہ کوموماتو میں 2 پہاڑی دروں کے درمیان قائم 80 میٹر طویل رابطہ پل بھی تباہ ہو گیا۔جاپان کے میٹرولوجیکل ڈپارٹمنٹ کی جانب سے کئی آفٹر شاکس کی رپورٹس بھی جاری کیں۔ریاست کیوشو کے شہر کوموماتو میں انفراسٹرکچر کو شدید نقصان پہنچا ہے، اس کی متعدد شاہراہیں لینڈ سلائیڈنگ سے کئی مقامات سے بند ہو گئیں، بعض سڑکیں مکمل طور پر تباہ ہو چکی ہیں۔واضح رہے کہ جاپان، دنیا میں سب سے زلزلوں کے فعال ممالک میں سے ایک ہے اور دنیا کے کئی خطوں اور ممالک میں آنے والے زلزلوں میں 20 فیصد زلزلے صرف جاپان میں آتے ہیں۔مارچ 2011 میں شمال مشرقی جاپان میں 9 شدت کے زلزلے اور پھر سونامی کے باعث 18 ہزار سے زائد افراد ہلاک اور لاپتہ ہو گئے تھے، جبکہ اس سے فوکوشیما جوہری پلانٹ بھی بْری طرح متاثر ہوا تھا۔

TOPPOPULARRECENT