Monday , August 21 2017
Home / عرب دنیا / جب اٹلی اور برطانیہ میں ریفرنڈم ہوسکتا ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں؟ سرتاج عزیز

جب اٹلی اور برطانیہ میں ریفرنڈم ہوسکتا ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں؟ سرتاج عزیز

اسلام آباد ۔ 10 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) پاکستانی وزیراعظم نواز شریف کے امورخارجہ کے مشیر سرتاج عزیز نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان ہندوستان کے ساتھ تمام زیرتصفیہ تنازعات بشمول کشمیر کی پرامن یکسوئی کا خواہاں ہے تاکہ اس خطہ میں دیرپا امن کا قیام ایک حقیقت بن جائے۔ یاد رہیکہ سرتاج عزیز کا بیان ایک ایسے وقت آیا ہے جب لائن آف کنٹرول (LOC) پر دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔ انگریزی اخبار نیوز انٹرنیشنل کے مطابق سرتاج عزیز نے ہندوستان پر یہ الزام بھی عائد کیا کہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی کے جوواقعات رونما ہورہے ہیں ان پرسے توجہ ہٹانے کیلئے ہندوستان مبینہ طور پر ایل او سی کو ہوّا بنا کر پیش کررہا ہے۔ انہوں نے ادعا کیا کہ گذشتہ ایک سال کے دوران ہندوستان ایل او سی پر متعدد مخالفتوں کا مرتکب ہوا ہے جس میں کئی بے قصور اور معصوم لوگ مارے گئے۔ سرتاج عزیز نے یہ بھی کہا کہ پاکستان کشمیری عوام کی سیاسی، اخلاقی اور سفارتی تائید کا سلسلہ اس وقت تک بدستور جاری رکھے گا جب تک کشمیریوں کو ہندوستان سے آزادی نہیں مل جاتی۔ ہندوستان ایک جمہوری ملک سے اسے کشمیر کی عوام کو یہ موقع دینا چاہئے کہ وہ اپنے مستقبل کا خود فیصلہ کریں۔ جب اٹلی اور برطانیہ میں ریفرنڈم ہوسکتا ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں۔ انہوں نے انتہائی پراعتماد لہجہ میں کہا کہ اگر کشمیر میں استصواب عامہ ہوا تو کوئی بھی مسلمان ہندوستان میں رہنا پسند نہیں کرے گا۔

TOPPOPULARRECENT