Sunday , September 24 2017
Home / ہندوستان / ججوں کے عدم تقررات کی سزا بے قصور قیدی بھگت رہے ہیں

ججوں کے عدم تقررات کی سزا بے قصور قیدی بھگت رہے ہیں

سپریم کورٹ کے ساتھ حکومت تصادم کی راہ پر گامزن۔ اپوزیشن کا الزام
نئی دہلی 21 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس لیڈر آنند شرما نے آج یہ الزام عائد کیا ہے کہ نیشنل جوڈیشیل اپارئنمنٹ کمیشن کے معاملہ میں سپریم کورٹ فیصلہ کے بعد حکومت نے حالت برہمی میں ججوں کے تقررات روک دیئے ہیں جبکہ مرکز نے اس الزام کی پرزور تردید کی ہے۔ ملک گیر سطح پر ہائیکورٹس میں ججوں کی مخلوعہ جائیدادوں کا تذکرہ کرتے ہوئے انھوں نے کہاکہ گزشتہ ایک سال سے کالجیم، چیف جسٹس آف انڈیا نے حکومت کو متعدد سفارشات پیش کی ہیں لیکن نیشنل جوڈیشیل اپائنمنٹ کمیشن کے فیصلہ پر حکومت کو ناگوار گذرا اور اس نے سپریم کورٹ کے کالجیم سے تصادم کی راہ اختیار کرلی۔ راجیہ سبھا میں آج اراکین نے عدالتوں میں بڑی تعداد میں زیر التوا معاملوں پر سخت تشویش ظاہر کی اور ججوں کی خالی اسامیوں کو فوراً بھرنے کا مطالبہ کیا ۔کانگریس کے آنند شرما نے وقفہ صفر کے دوران ا س معاملے کو اٹھاتے ہوئے کہا کہ ملک کی عدالتوں میں پانچ کروڑمعاملے زیر التوا ہیں جبکہ حکومت کی منشا ججوں کی تقرری روکنے کی ہے ۔انہوں نے کہا کہ معاملوں کی سماعت نہ ہونے کی وجہ سے جیلوں میں بہت سارے قیدی ایسے ہیں جو اگر قصوروار پائے جاتے تو انہیں جو سزا ملتی اس سے بھی اس سے زیادہ عرصے سے وہ جیل میں ہیں ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT