Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / جموں میں بین الاقوامی سرحد پر پاکستان کی شدید گولہ باری

جموں میں بین الاقوامی سرحد پر پاکستان کی شدید گولہ باری

ایک معمر خاتون ہلاک، 5دیگر زخمی‘ خطہ قبضہ اور بین الاقوامی سرحد پر پاکستانی جنگ کی خلاف ورزیاں جاری
جموں ، 17 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) جموں وکشمیر کے ارنیا سیکٹر میں بین الاقوامی سرحد پر پاکستانی رینجرز کی فائرنگ سے ایک معمر خاتون ہلاک جبکہ پانچ دیگر عام شہری زخمی ہوگئے ہیں۔سبھی زخمیوں کو علاج ومعالجہ کے لئے گورنمنٹ میڈیکل کالج و اسپتال جموں میں داخل کرایا گیا ہے ۔ زخمیوں میں ایک 12 سالہ کمسن لڑکا بھی شامل ہے ۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی رینجرز نے گذشتہ نصف شب کو ارنیا سیکٹر میں بین الاقوامی سرحد پر کم از کم دس بھارتی فوجی چوکیوں اور متعدد سرحدی دیہات کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستانی رینجرز کی جانب سے ہلکے و خودکار ہتھیاروں سے فائرنگ کی گئی اور متعدد مارٹر گولے داغے گئے ۔ ذرائع نے بتایا ‘پاکستان کی طرف سے فائرنگ کا سلسلہ گذشتہ نصف شب سے اتوار کی صبح قریب سات بجے تک جاری رہا’۔ انہوں نے بتایا کہ سرحد پارپاکستانی رینجرز کی فائرنگ سے 6 عام شہری زخمی ہوئے جن میں ایک 60 سالہ معمر خاتون زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئی۔ ذرائع نے مہلوک خاتون کی شناخت رتنو دیوی کے بطور کردی۔ زخمیوں میں سے تین کی شناخت 65 سالہ مایا دیوی، 35 سالہ رجنی کمار اور 12 سالہ شبہام کمار کے بطور کی گئی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ زخمیوں کو میڈیکل کالج و اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے ۔ دفاعی ذرائع نے بتایا کہ ارنیا سیکٹر میں بین الاقوامی سرحد پر تعینات بی ایس ایف جوان سرحد پار سے ہونے والی فائرنگ کا منہ توڑ جواب دے رہے ہیں۔ اعداد وشمار کے مطابق 2016 میں جنگ بندی معاہدے کی 228 خلاف ورزیاں ریکارڈ کی گئی تھیں۔ مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے 12 ستمبر کو جموں میں پاکستان کو سرحدوں پر جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کا سلسلہ بند کرنے کی نصیحت کرتے ہوئے کہا کہ ‘بصورت دیگر سرحدوں پر تعینات ہمارے فوج ایسے حالات پیدا کرے گی کہ پاکستان جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزیوں کا سلسلہ بند کرنے پر مجبور ہوگا’۔

2014 سے میں دیکھ رہا ہوں کہ پاکستان کی طرف سے ہر سال 400 سے زائد بار جنگ معاہدے کی خلاف ورزیاں ہوتی ہیں۔پاکستان کو جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزیوں کا سلسلہ بند کرنا ہوگا۔ ہمارے فوج اور بی ایس ایف کے جوان انہیں منہ توڑ جواب دے رہے ہیں۔ وہ ایسے حالات پیدا کریں گے کہ پاکستان جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزیوں کا سلسلہ بند کرنے پر مجبور ہوگا’۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ پاکستانی رینجرز کی جانب سے فائر کئے گئے متعدد مارٹر گولے ارنیا بس اسٹینڈ میں گر کر پھٹ گئے ۔ انہوں نے بتایا کہ سرحد پار فائرنگ کے نتیجے میں انسانی جانوں کا نقصان ہونے کے علاوہ کم از کم 3 مویشی ہلاک جبکہ متعدد دیگر زخمی ہوگئے ۔ انہوں نے بتایا کہ فائرنگ کے نتیجے میں کئی رہائشی مکانات اور گاؤ خانوں کو بھی نقصان پہنچا ہے ۔ایک رپورٹ کے مطابق ارنیا سیکٹر میں گذشتہ چند سے مسلسل گولہ باری کے نتیجے میں سرحدی دیہاتیوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے اور ان میں کئی کنبوں نے محفوظ مقامات پر واقع سرکاری اسکولوں اور مذہبی ڈھانچوں میں پناہ لے لی ہے ۔ یہ بات یہاں قابل ذکر ہے کہ 15 ستمبر کو اسی سیکٹر (ارنیا سیکٹر) میں سرحد پار پاکستانی رینجرز کی فائرنگ سے برجندر بہادر سنگھ نامی بی ایس ایف کانسٹیبل جاں بحق ہوا۔ مہلوک کانسٹیبل ریاست اترپردیش کا رہنے والا تھا۔ جموں وکشمیر میں پاکستان کے ساتھ لگنے والی سرحدوں پر گذشتہ ڈیڑھ ماہ سے کشیدگی کا ماحول بنا ہوا ہے ۔

 

TOPPOPULARRECENT