Tuesday , September 26 2017
Home / ہندوستان / جموں و کشمیر میں 2016ء میں تین گنافسادات

جموں و کشمیر میں 2016ء میں تین گنافسادات

سرکاری ملازمین پر حملوں کے واقعات میں انحطاط کے سوائے دیگر تمام واقعات میں اضافہ
جموں۔5مارچ ( سیاست ڈاٹ کام) جموں و کشمیر میں 2016ء میں آتش زنی اور فسادات ماضی کی بہ نسبت تین گنا زیادہ دیکھے گئے جس کی وجہ 2016ء میں بے چینی کے واقعات میں ٹھوس اضافہ ہے ۔ دہشت گرد برہان وانی کی ہلاکت کے بعد فسادات اور آتش زنی کے واقعات میں تین گنا اضافہ ہوگیا ۔ ریاستی پولیس کے شعبہ جرائم کی معلومات کے بموجب جموں و کشمیر میں 2016ء میں فسادات کے 3404واقعات پیش آئے جب کہ 2015ء میں ان کی تعداد 1157 تھی یعنی 2247واقعات زیادہ پیش آئے ۔ اسی طرح پولیس نے 2016ء میں آتشزنی کے 267مقدمے درج کئے جب کہ 2015ء میں اُن کی تعداد 147تھی ۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس مدت میں آتش زنی کے 120 زیادہ واقعات پیش آئے ۔ شعبہ جرائم کے عہدیداروں نے اس اضافہ کی سمت نشاندہی کرتے ہوئے اس کی وجہ وادی کشمیر میں گذشتہ 15ماہ سے جاری بے چینی کو قرار دیا جو حزب المجاہدین کے عسکریت پسند کمانڈر برہان وانی کی جولائی میں ایک انکاؤنٹر میں جولائی میں ہلاکت ہے ۔ پولیس نے کہا کہ 2015کی بہ نسبت 2016ء میں اقدام قتل کے 143 واقعات میں اضافہ ہوا ۔ 2016میں 573 اور 2015ء میں 430 ایسے واقعات رجسٹرڈ کئے گئے تھے ۔ اسی طرح قتل کے واقعات میں بھی اضافہ دیکھا گیا ۔ 2016ء میں 140 اور 2015ء میں 133 قتل کے واقعات پیش آئے تھے ۔ یہ اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ پولیس کی تحویل میں 2015 اور 2016ء میں کوئی ہلاکت واقع نہیں ہوئی ۔

فرقہ وارانہ فسادات کی تعداد میں بھی 2015کی بہ نسبت 2016میں اضافہ ہوا ۔ 2016 میں فرقہ وارانہ فسادات کے 6واقعات پیش آئے جبک ہ 2015ء میں صرف 4فرقہ وارانہ فسادات ہوئے تھے ۔ سال 2016ء میں غیرقانونی سرگرمیوں کے انسداد قانون کے تحت بھی مقدمات کے اندراج میں اضافہ ہوا ۔ 2016ء میں ان کی تعداد 146تھی جب کہ 2015ء میں صرف 44مقدمے درج کئے گئے تھے ۔ اس طرح 102مقدمات کا 2016میں اضافہ ہوا ۔ 2016میں قانون اسلحہ کے تحت 180مقدمات درج کئے گئے جن کی تعداد 2015میں 146تھیں ۔ 2016ء میں دھماکو مادے قانون کے تحت 39مقدمات درج کئے گئے جن کی تعداد 2015ء میں صرف 34تھی ۔ سرکاری ملازمین پر حملوں کے واقعات میں کمی آئی ۔ 2016ء میں 516مقدمے درج کئے گئے جو 2015ء میں 535تھے ۔ بمباری کے واقعات میں بھی 2016ء میں بہت زیادہ اضافہ دیکھا گا۔ سنگباری کے جملہ 2690واقعات پیش آئے ۔ اعظم ترین تعداد 1248شمالی کشمیر میں تھی جب کہ جنوبی کشمیر میں سنگباری کے 875واقعات پیش آئے ۔

TOPPOPULARRECENT