Thursday , August 17 2017
Home / کھیل کی خبریں / جنوبی افریقہ بمقابلہ افغانستان 3 بجے اور ویسٹ انڈیز بمقابلہ سری لنکا 7.30 بجے ہوگا

جنوبی افریقہ بمقابلہ افغانستان 3 بجے اور ویسٹ انڈیز بمقابلہ سری لنکا 7.30 بجے ہوگا

ممبئی ؍ منگلور 19 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ہمالیائی اسکور بنانے کے باوجود انگلینڈ کے خلاف شکست کے بعد ورلڈکپ میں خود کو باقی رکھنے کے لئے جنوبی افریقی ٹیم کو کل یہاں کھیلے جانے والے مقابلہ میں افغانستان کو شکست دینا ضروری ہے۔ وانکھڈے اسٹیڈیم میں کھیلے جانے والے اِس مقابلہ میں افغانستان کو دفاعی چمپئن سری لنکا کے خلاف قریبی شکست برداشت کرنی پڑی۔ تاہم جنوبی افریقہ کے خلاف حیران کن کامیابی کے لئے افغانستان کی ٹیم پرعزم ہے۔ دوسری جانب فاف ڈپلیسی کی زیرقیادت جنوبی افریقی ٹیم جس نے اپنے گزشتہ مقابلہ میں انگلش ٹیم کے خلاف 4 وکٹوں کے نقصان پر 229 رنز اسکور کئے تھے لیکن اسے شکست برداشت کرنی پڑی۔ افتتاحی مقابلہ میں جنوبی افریقی ٹیم کے بیٹسمنوں نے بہتر مظاہرہ کیا لیکن بولروں نے ایک بہتر نشانہ کے دفاع میں انتہائی ناقص بولنگ کی۔ افغانستان اپنے ٹاپ آرڈر بیٹسمین میں موجود اصغر اسٹانکیز سے ایک اور بہتر مظاہرہ کی اُمید کررہا ہے

جیسا کہ انھوں نے سری لنکا کے خلاف 62 رنز کی اننگز کھیلی ہے۔ ٹیم میں شامل محمد شہزاد اور مڈل آرڈر بیٹسمین محمد نبی سے بھی ٹیم کو بہتر مظاہرہ کی ضرورت ہے کیوں کہ جنوبی افریقہ کے خلاف شکست کا مطلب ٹورنمنٹ سے اخراج ہوگا۔ دریں اثناء جنوبی افریقی ٹیم کے اوپنر ہاشم آملہ نے کہا ہے کہ افغانستان کو آسان حریف تصور نہیں کیا جاسکتا چونکہ اِس نے دفاعی چمپئن سری لنکا کے لئے حالات مشکل کردیئے تھے۔ کل ایک اور مقابلہ بنگلور کے چنا سوامی اسٹیڈیم میں ویسٹ انڈیز اور سری لنکا کے درمیان کھیلا جائے گا اور اس مقابلہ میں ویسٹ انڈیز کی ٹیم کامیابی کے ساتھ سیمی فائنل میں رسائی کے امکانات کو مستحکم کرنے کی خواہاں ہے کیوں کہ سابق چمپئن ویسٹ انڈیز کے اوپنر کریس گیل نے ٹوئنٹی 20 میں ورلڈکپ کی تیز ترین سنچری 47 گیندوں میں انگلینڈ کے خلاف اسکور کی ہے۔ گیل کے خلاف سری لنکائی بولروں کے لئے حالات مشکل ترین ہوسکتے ہیں لیکن کپتان انجیلو میتھیوز کے ہمراہ شاندار فارم میں موجود تلک رتنے دلشان ٹیم کی کامیابی میں اہم رول ادا کرسکتے ہیں۔ ویسٹ انڈیز کے لئے مارلون سیمیولز کا فارم میں رہنا بھی اہمیت کا حامل ہے کیوں کہ انھوں نے گزشتہ مقابلہ میں تیز رفتار 37 رنز اسکور کرتے ہوئے اننگز کے آغاز پر کریس گیل کو دباؤ سے محفوظ رکھا۔ جس کی بدولت وہ کچھ دیر وکٹ پر ٹھہرتے ہوئے ایک شاندار اننگز کھیل پائے۔

TOPPOPULARRECENT