Wednesday , September 20 2017
Home / Top Stories / جنوبی روس میں فلائی دوبئی طیارہ حادثہ کا شکار، 62 افراد ہلاک

جنوبی روس میں فلائی دوبئی طیارہ حادثہ کا شکار، 62 افراد ہلاک

مہلوکین میں دو ہندوستانی بھی شامل ، انتہائی نامساعد موسمی حالات میں لینڈنگ کی دوسری کوشش کا افسوسناک نتیجہ
روستوف ۔ آن ۔ ڈان (روس) 19 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) دو ہندوستانیوں کے بشمول تمام 62 افراد فلائی دوبئی کے ایک بوئنگ طیارہ کو پیش آئے حادثہ میں ہلاک ہوگئے۔ یہ طیارہ جنوبی روس کے روستوف ۔ آن ۔ ڈان ایرپورٹ پر لینڈنگ کی کوشش کے دوران حادثہ کا شکار ہوکر شعلہ پوش ہوگیا۔ عہدیداروں نے یہ بات بتائی۔ ہلاک ہونے والے دو ہندوستانیوں کی انجو کتھیرویل ایپن اور موہن شیام کی حیثیت سے شناخت کی گئی ہے۔ دوسرے مرنے والے مسافرین میں 44 روسی، 8 یوکرینی اور ایک ازبیک شہری شامل ہے۔ انتہائی نامساعد موسمی حالات میں لینڈنگ کی اپنی دوسری کوشش کے دوران طیارہ حادثہ کا شکار ہوگیا کیوں کہ وہ رن وے سے باہر ہوگیا تھا۔ وہ حادثہ کا شکار ہونے کے بعد شعلہ پوش ہوگیا اور وسیع علاقہ میں اِس کا ملبہ بکھر گیا۔ فلائی دوبئی ایرلائنز نے فیس بُک پر ایک بیان میں حادثہ کی توثیق کی ہے اور کہاکہ حادثہ کے نتیجہ میں تمام 62 افراد ہلاک ہوگئے۔ روس کے تحقیق کاروں نے بھی 62 اموات کی توثیق کی ہے۔ حالانکہ ابتداء میں یہ تعداد 61 بتائی گئی تھی۔ عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ابتدائی اطلاعات کے مطابق طیارے میں 55 مسافرین اور عملہ کے 7 ارکان شامل تھے جو سب فوت ہوچکے ہیں۔ مقامی میڈیا میں دکھائے گئے فوٹیج کے مطابق طیارہ نیچے گرنے کے بعد شعلہ پوش ہوگیا۔ حکام کو آگ پر قابو پانے کے لئے ایک گھنٹے سے زیادہ وقت درکار ہوا۔ زائداز 500 امدادی کارکن اور 60 گاڑیاں حادثہ کے مقام کو روانہ کی گئیں۔ ہنگامی خدمات کی وزارت نے یہ بات بتائی۔ تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ زمین پر گرنے کے بعد طیارہ کئی ٹکڑوں میں بکھر گیا۔ بوئنگ 737 طیارے کا ملبہ حادثہ کے مقام سے دیڑھ کیلو میٹر تک بکھر گیا۔

کہا گیا ہے کہ جس وقت طیارہ لینڈنگ کی کوشش کررہا تھا ، طوفانی ہوائیں چل رہی تھیں اور تیز بارش جاری تھی۔ یہ طیارہ دو گھنٹے تک ایرپورٹ کے اطراف چکر لگاتے ہوئے لینڈنگ کی کوشش کررہا تھا کیوں کہ یہاں موسم انتہائی خراب تھا۔ دوسری پروازوں کے 300 کیلو میٹر کے فاصلہ پر واقع کراس نوڈور ایرپورٹ کو موڑ دیا گیا۔ ایک متبدلہ پرواز کے مسافر نے بتایا کہ موسم انتہائی خراب تھا اور طیارہ خوفناک حد تک جھونکے لے رہا تھا۔ حادثہ کی فوجداری تحقیقات کا آغاز کردیا گیا ہے تاکہ یہ پتہ چلایا جاسکے کہ آیا سیفٹی قواعد کی خلاف ورزی تو نہیں ہوئی یا پائیلٹ سے کوئی غلطی تو نہیں ہوئی۔ روس کی وزارت ٹرانسپورٹ کی مشیر جیانا تریکھویا نے بتایا کہ حادثہ کی وجوہات میں پائیلٹ کی امکانی غلطی کا پتہ چلانے کی بھی کوشش کی جائے گی۔ حادثہ ہندوستانی معیاری وقت کے مطابق صبح 6 بجکر 20 منٹ پر پیش آیا جبکہ طیارہ میں دوبئی سے رات 11.50 کو اُڑان بھری تھی۔ فلائی دوبئی نے اپنے ایک بیان میں کہاکہ تحقیقات میں تمام متعلقہ گوشوں سے قریبی اشتراک کے ذریعہ حادثہ کی وجوہات کا پتہ چلانے ہرممکن کوشش کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT