Wednesday , August 23 2017
Home / Top Stories / جنگ بندی کے باوجود حلب میں بمباری

جنگ بندی کے باوجود حلب میں بمباری

بیروت، 14 دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)شام کے دوسرے بڑے شہر حلب کے باغیوں کے قبضے والے مشرقی حصے میں روس اور ترکی کے درمیان بات چیت کے بعد آج سے نافذ ہونے والی جنگ بندی کچھ ہی وقت بعد ٹوٹ گئی اور گولہ باری شروع ہو گئی جو نصف گھنٹے تک جاری رہی۔ روس نے بمباری کے لیے باغیوں کو مجرم ٹھہرایا ہے ۔ شامی حقوق انسانی کی نگراں تنظیم کے مطابق حلب کے مشرقی علاقے میں سرکاری فوجیوں نے توپوں، ٹینکوں اور مارٹر سے گولہ باری کی۔ گولہ باری باغیوں کے قبضے والے علاقوں پر کی گئی لیکن آدھے گھنٹے کے بعد یہ گولہ باری بند ہوگئی۔ اس درمیان انقرہ سے موصولہ خبر کے مطابق ترکی کا کہنا ہے کہ شام کے فوجیوں اور باغیوں کے درمیان گولہ باری کے باوجود حلب کے جنگ والے علاقے سے شہریوں کو نکالنے کے منصوبے کو ختم نہیں کیا گیا ہے ۔ قبل ازیں شام کے جنگ زدہ شہر حلب کے باغیوں کے کنٹرول والے مشرقی حصے میں جنگ بندی نافذکردی گئی ہے لیکن وہاں سے لوگوں کو نکالنے کا کام اب بھی شروع نہیں ہو پایا ہے ۔ باغیوں کے ذرائع نے بتایا کہ شہر سے شہریوں کو نکالنے کے منصوبے کو نافذ کرنے میں کچھ تاخیر ہو سکتی ہے ۔ باغی دھڑے الجھۃ الشامیہ کے ایک افسر کے مطابق حلب میں جنگ بندی روس اور ترکی کے درمیان بات چیت کے بعد نافذ کی گئی۔
حلب میں خونریزی کی مذمت ، سعودی ادارہ کا ردعمل
دوبئی، 14 دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)سعودی عرب کے اعلی مذہبی ادارے نے شامی سرکار کی جانب سے عام شہریوں کی ہلاکتوں کی مذمت کی ہے اور اسے مجرمانہ فعل بتاتے ہوئے دنیا بھر کے مسلمانوں سے متاثرین کی مدد کرنے کی اپیل کی ۔ ادارہ نے اقوام متحدہ کی رپورٹ کے بعد یہ اپیل جاری کی ہے ۔ اقوام متحدہ کا کہنا ہیکہ چند دنوں کے اندر شام کے مشرقی حلب میں82 عام شہریوں کے مارے جانے کی خبر ملی ہے ۔ ادارہ سے وابستہ علما نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے اپنا ردعمل ظاہر کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT