Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / جن دھن یوجنا کھاتہ داروں کو 10 ہزار روپئے!

جن دھن یوجنا کھاتہ داروں کو 10 ہزار روپئے!

نوٹ بندی کی آمدنی کا استعمال، پانچ ریاستوں کے انتخابات پر حکمت
حیدرآباد۔20نومبر(سیاست نیوز) حکومت جن دھن یوجنا کے تحت کھولے گئے کھاتوں میں فوری طور پر 10ہزار روپئے ڈالے گی! بتایا جاتا ہے کہ حکومت کی جانب سے اس بات پر غور کیا جانے لگا ہے کہ مجوزہ 5ریاستوں میں اسمبلی انتخابات سے قبل حکومت کو نوٹوں کی تنسیخ سے ہونے والی آمدنی کا کچھ حصہ ان کھاتوں میں ڈالا جائے گا جو ’پردھان منتری جن دھن یوجنا‘ کے تحت کھولے گئے ہیں۔ باوثوق ذرائع سے موصولہ اطلاعات کے بموجب حکومت ہند کے اعلی عہدیدار اس بات کا جائزہ لے رہے ہیں کہ کس طرح اس اسکیم کو عملی جامہ پہناتے ہوئے ان کھاتو ںمیں رقومات منتقل کی جا سکتی ہیں جو زیرو بیلنس کھلوائے گئے تھے اور جن میں اب تک 50ہزار روپئے سے زیادہ نہ ڈالے گئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق ملک بھر میں 25.51کروڑ جن دھن کھاتے ہیں جن میں 6کروڑ کھاتے ایسے ہیں جو اب تک زیرو بیلنس ہی ہیں جبکہ مابقی کھاتوں میں 45ہزار636کروڑ 61لاکھ روپئے جمع ہیں۔ عوامی شعبہ سے تعلق رکھنے والے بینکوں میں 20کروڑ 36لاکھ کھاتے کھولے گئے تھے جن میں 11کروڑ 43لاکھ دیہی علاقوں میں کھولے گئے اور 8کروڑ93لاکھ شہری علاقوں میں کھولے گئے ہیں۔ ان کھاتوں میں 11کروڑ34لاکھ کھاتے ایسے ہیں جو آدھار کارڈ سے مربوط ہیں۔ ان میں 23.37فیصد کھاتے زیرو بیلنس ہیں۔ اسی طرح علاقائی دیہی بینکوں میں 4کروڑ 31لاکھ کھاتے کھولے گئے ہیں جن میں 3.71کروڑ دیہی علاقوں میں ہیںاور 60لاکھ شہری علاقوں میں ہیں۔ ان جملہ بینکوں میں 20.26فیصد بینکوں کے کھاتے 9نومبر تک زیرو بیلنس تھے۔ خانگی بینکوں میں جہاں پردھان منتری جن دھن یوجنا کے تحت کھاتے کھولے گئے ہیں ان میں 84لاکھ کھاتے ہیں جن میں 53لاکھ دیہی علاقوں میں کھولے گئے ہیں اور 31لاکھ شہری علاقوں میں کھولے گئے ہیں ان میں 36لاکھ کھاتے آدھار کارڈ سے مربوط ہیں اور 36.27فیصد کھاتے زیرو بیلنس ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ نوٹوں کی تنسیخ کے بعد جو بینک کھاتے خالی تھے ان میں غیر محسوب دولت جمع کی جانے لگی ہے ان اطلاعات کے بعد حکومت نے ان کھاتو ںمیں 50000 روپئے جمع کروانے کی حد مقرر کر دی ہے۔ حکومت کے پاس موجود تفصیلات کے مطابق اب ملک بھر میں 5کروڑ 80لاکھ ایسے کھاتے ہیں جن میں کوئی رقم جمع نہیں کروائی گئی ہے۔ حکومت کی جانب سے جن دھن یوجنا کے تحت کھولے گئے ان کھاتوں میں جو رقومات جمع کروائی جائیں گی ان کھاتو ںکا آدھار کارڈ سے مربوط ہونا لازمی ہوگا۔ بتایا جاتا ہے کہ حکومت کی جانب سے اس سلسلہ میں وزارت فینانس کے اعلی عہدیداروں سے مشاورت کی جا رہی ہے اور بتایا جاتا ہے کہ جاریہ سال کے اواخر یا آئندہ سال کے اوائل میں 10ہزار روپئے ان کھاتوں میں ڈالنے کے متعلق غور کیا جارہا ہے اس کام کیلئے حکومت پر 58ہزار کروڑ کا بوجھ عائد ہوگا ذرائع کا کہنا ہے کہ نوٹوں کی تنسیخ کے بعد جو حالات پیدا ہورہے ہیں اور جو آمدنی انکم ٹیکس کے ذریعہ ہوگی اسی آمدنی سے حکومت ان کھاتو ںمیں یہ رقومات منتقل کرے گی ۔

TOPPOPULARRECENT