Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / جہادیوں اور یمنی فوج کے درمیان جھڑپیں ‘ 19ہلاک

جہادیوں اور یمنی فوج کے درمیان جھڑپیں ‘ 19ہلاک

مہلوکین میں دو ملازمین پولیس بھی شامل ‘ باغیوں اور سعودی زیر قیادت اتحاد میں جنگ جاری
عدن ۔13مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) یمن کے جنوبی شہر عدن میں جو حکومت کا عارضی اڈہ ہے فوج اور جہادیوں کے درمیان جھڑپ میں کم از کم القاعدہ کے 17مشتبہ ارکان اور دو ملازمین پولیس دو دن کے دوران ہلاک ہوگئے ۔ آج رات بھر سکون کے بعد وسطی ضلع منصورہ میں جھڑپوں کا دوبارہ آغاز ہوگیا ۔ یہ جہادیوں کا مستحکم گڑھ سمجھا جاتا ہے ۔ لڑاکا طیارے اور آپاچی ہیلی کاپٹر سعودی زیرقیادت اتحاد کے تحت فضائی حملے فوج کی تائید میں کررہے تھے ۔ القاعدہ کے کم از کم 17 جنگجو اور دو ملازمین پولیس کل سے اب تک ہلاک ہوچکے ہیں ۔ فوج کے ایک عہدیدار کے بموجب بیشتر جہادی فضائی حملوں میں ہلاک ہوئے ۔ کئی بندوق بردار جو القاعدہ کا پرچم اٹھائے ہوئے تھے پولیس کو پسپا کرنے کیلئے تعینات کئے گئے تھے جو پڑوس کے علاقہ میں داخل ہونے کی کوشش کررہی تھی ۔ پولیس نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ منصورہ میں دہشت گرد مسلح گروپوں کے ساتھ منصورہ میں جنگ جاری رہے گی تاکہ مقامی شہریوں کی حفاظت کو یقینی بنایا جاسکے ۔

القاعدہ اور دولت اسلامیہ کے گروپس نے ایرانی حمایت یافتہ حوثی شورش پسندوں اور حکومت حامی فوج کے درمیان جنگ سے فائدہ اٹھاتے ہوئے جنوبی یمن بشمول شہر عدن میں اپنے وجود کا احساس دلایا ہے ۔ 6,100سے زیادہ افراد باغیوں اور ان کے حلیفوں کے خلاف مارچ 2015سے سعودی زیرقیادت مخلوط اتحاد کے حوثی باغیوں پر فضائی حملوں کے دوران ہلاک ہوچکے ہیں ۔ یہ اعداد و شمار اقوام متحدہ کی رپورٹ کے بموجب ہے ‘ جب کہ مقامی شہریوں کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد اس سے کئی زیادہ ہے ۔ مہلوکین میں باغیوں سے زیادہ شہریوں کی تعداد ہے جن میں سے بیشتر خواتین اور اطفال ہیں ۔ مخلوط اتحاد یہ دعویٰ نہیں کرسکتا کہ وہ بے قصور شہریوں کو ہلاک کرنے سے گریز کررہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT