Wednesday , September 20 2017
Home / Top Stories / جیش محمد سے روابط کا کوئی ثبوت نہ ملا ، چار مشتبہ مسلم نوجوان رہا

جیش محمد سے روابط کا کوئی ثبوت نہ ملا ، چار مشتبہ مسلم نوجوان رہا

نئی دہلی ، 7 مئی (سیاست ڈاٹ کام) ممنوعہ تنظیم
جیش محمد کے تئیں مبینہ نظریاتی میلان رکھنے پر دہلی پولیس
کی جانب سے محروس 10 مشتبہ دہشت گردوں میں سے چار معقول ثبوت
نہ ہونے کے سبب آج رہا کردیئے گئے، جن سے تین روز قبل اسپیشل سل نے تفتیش کی تھی۔ پولیس تحقیقات میں مدد کیلئے انڈین کمپیوٹر ایمرجنسی رسپانس ٹیم سے بھی رجوع ہوئی ، جو حکومت ہند کی سائبر سکیورٹی خطرات سے نمٹنے والی نوڈل ایجنسی ہے۔ آج رہا چار مشتبہ افراد میں سے تین مشرقی دہلی کے محلہ چاند باغ کے ساکنان ہیں اور دیگر غازی آباد کے لونی علاقہ کا متوطن ہے۔ انھیں پولیس فورس کی انسدادِ دہشت گردی یونٹ کے اسپیشل سل کے لودھی کالونی آفس سے تقریباً 4 بجے دن رہا کیا گیا۔ اسپیشل کمشنر آف پولیس اروند دیپ نے کہا: ’’ہم نے دہلی کے سائیکالوجسٹ کا انتظام کیا ہے اور چاروں کو کہا کہ اُن سے باقاعدہ رجوع ہوتے رہیں۔ سائیکالوجسٹ ہر ہفتہ اُن کے بارے میں ہمیں رپورٹ فراہم کیا کرے گا۔‘‘ انھوں نے کہا کہ پوچھ تاچھ کے دوران ظاہر ہوا کہ یہ تمام نوجوانوں میں فطری طور پر شدید غصہ و نفرت ہے ، جس کے نتیجے میں وہ آسان شکار بنے اور دہشت گردی کے ممکنہ ارکان ظاہر ہوئے۔ منگل کی رات دیر گئے کی کارروائی میں اسپیشل سل نے 13 افراد پکڑے تھے۔ ان میں سے ساجد، سمیر احمد اور شاکر انصاری گرفتار کرلئے گئے، 4 جیش محمد سے ربط ثابت نہ ہونے پر چھوٹ گئے اور 6 سے تحقیقات کار ہنوز پوچھ تاچھ کررہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT