Thursday , August 24 2017
Home / ہندوستان / جیٹاپور نیوکلیر پراجکٹ مسئلہ ، منفی اثرات کا اندیشہ

جیٹاپور نیوکلیر پراجکٹ مسئلہ ، منفی اثرات کا اندیشہ

شیوسینا وزیر اعظم نریندر مودی سے رجوع ، سینا کے ارکان پارلیمنٹ کی نمائندگی
ممبئی ۔16 ڈسمبر ۔ (سیاست ڈاٹ کام ) پراجکٹ کے بارے میں بارے تفصیلی رپورٹ کی سختی سے مخالفت کرتے ہوئے شیوسینا نے وزیراعظم نریندر مودی کو ایک مکتوب روانہ کیا ہے جس میں مہاراشٹرا کے صاف ستھرے علاقے کونکن پر اس نیوکلیر پلانٹ کے مضر اثرات مرتب ہونے کے بارے میں وضاحت سے بیان کیا گیا ہے ۔ شیوسینا کے ارکان پارلیمنٹ نے جو 10,000 میگاواٹ نیوکلیر برقی پراجکٹ کے شدید مخالف ہیں ، چند ماہ قبل وزیراعظم سے ملاقات کرکے پلانٹ کے بارے میں اپنے اندیشوں سے انھیں واقف کروایا تھا ۔ شیوسینا کے قائد اور وزیر ماحولیات برائے بی جے پی زیرقیادت ریاستی حکومت رام داس کدم نے کہا کہ انھوں نے مودی کو تفصیل سے رپورٹ روانہ کی ہے کہ اس پلانٹ کے مضر اثرات کس طرح کونکن کے علاقہ پر مرتب ہوں گے اور قریبی علاقہ کی آبی زندگی اس سے متاثر ہوگی ۔ کدم نے کہا کہ انھوں نے ایک تفصیلی رپورٹ تیار کی ہے جو 418 صفحات پر مشتمل ہے اور جس میں کونکن بچاؤ سمیتی کے تمام اعتراضات کو شامل کیا گیا ہے ۔ مادھو راؤ گاڈگل کمیٹی نے یہ رپورٹ تیار کی ہے ۔ اس کے لئے بی جے واگھ مارے ، جابت سمیتی نے بھی ایک عوامی سماعت کا اجلاس منعقد کیا تھا اور مہاراشٹرا آلودگی کنٹرول بورڈ سے بھی جیٹاپور پراجکٹ کے بارے میں رائے لی گئی ہے ۔

یوروپی یونین نے حکم دیا ہے کہ اس کے تمام 143 ری ایکٹرس کی شدت سے جانچ کی جائے کیوں کہ چند سال قبل جاپان کے نیوکلیر برقی توانائی پلانٹ میں سانحہ پیش آچکا ہے ۔ جرمنی نے اعلان کیا ہے کہ وہ نیوکلیر برقی توانائی کا استعمال ترک کردے گا اور قابل تجدید توانائی کو فروغ دے گا ۔ کدم نے نیوکلیر برقی توانائی کے ایک ایسے وقت استعمال پر اعتراض کیا جب کہ پوری دنیا نیوکلیر برقی توانائی کے استعمال پر ازسرنو غور کررہی ہے ۔ انھوں نے کہاکہ ہندوستان کو اس کے بجائے صاف ستھری اور شمسی توانائی کے استعمال پر توجہ مرکوز کرنا چاہئے ۔ گوا میں مقیم قومی ادارہ برائے بحریات نے ایک رپورٹ داخل کی ہے جس کے بموجب آبی ـکائی کی 24 اقسام اور امرائیوں کی 6 اقسام بحر عرب میں نیوکلیر توانائی پلانٹ سے فضلہ کے اخراج کے نتیجہ میں تباہ ہوجائیں گی ۔ کدم نے کہاکہ بی جے پی مرکز کو اس کی اجازت نہیں دے گی کیوں کہ وہ ریاست میں برسراقتدار ہے ، وہ ریاست میں اس پلانٹ کے قیام کی مخالفت کریگی ۔ کونکن علاقہ کے عوام ماحولیات کو جوں کا توں برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔ وہ ترقی کے مخالف نہیں ہے لیکن ترقی ماحولیات پر منفی اثر کی قیمت پر نہیں ہونی چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT