Thursday , September 21 2017
Home / Top Stories / جی ایس ٹی کے تحت روزمرہ استعمال کی 30 اشیاء سستی ، لگثرری کاریں مہنگی

جی ایس ٹی کے تحت روزمرہ استعمال کی 30 اشیاء سستی ، لگثرری کاریں مہنگی

جی ایس ٹی آر ۔ 1 داخل کرنے کی آخری تاریخ میں 10 اکٹوبر تک توسیع ، حیدرآباد میں جی ایس ٹی کونسل اجلاس ، ارون جیٹلی کا خطاب
حیدرآباد ۔ 9 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : جی ایس ٹی کونسل نے آج متوسط سائز اور لگثرری کاروں پر 2 تا 7 فیصد زائد سیس عائد کرنے کا فیصلہ کیا جس کے بعد لگثرری کاریں مہنگی ہوجائیں گی ۔ لیکن چھوٹی اور ہائبراڈ کاروں کو کسی بھی اضافہ سے مستثنیٰ قرار دیا ۔ کونسل نے روزمرہ استعمال میں آنے والی کئی اشیاء کے لیے گڈس اینڈ سرویس ٹیکس شرحوں کو بھی کم کرنے کا فیصلہ کیا ۔ ان روزمرہ استعمال میں آنے والی اشیاء میں اٹلی ، دوسہ سے لے کر باورچی خانہ میں استعمال کیا جانے والا گیاس لائیٹر بھی شامل ہے ۔ حیدرآباد میں منعقدہ 8 گھنٹے طویل جی ایس ٹی کونسل اجلاس کے بعد وزیر فینانس ارون جیٹلی نے کہا کہ 2 فیصد زائد سیس کو متوسط حجم کی کاروں پر عائد کیا جائے گا ۔ جب کہ بڑی کاروں پر 5 فیصد اور SUVs کاروں پر 7 فیصد اضافی سیس عائد کیا جائیگا ۔ ارون جیٹلی کی قیادت میں منعقدہ کونسل اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ چھوٹی پٹرول اور ڈیزل کاروں پر کوئی اضافی ٹیکس عائد نہیں کیا جائے گا ۔ اضافی سیس کی عمل آوری سے متعلق تاریخ کا متعاقب اعلان کیا جائیگا ۔ پٹرول اور ڈیزل سے چلنے والی چھوٹی کاروں کو مابعد جی ایس ٹی 3 فیصد کے ٹیکس فوائد دئیے گئے ہیں ۔ ارون جیٹلی نے کہا کہ تقریبا 30 اشیاء پر جی ایس ٹی کو کم کیا گیا ہے ۔ ان اشیاء کی شرحوں کو طئے کیے جانے کے بعد اس میں اضافہ نہیں کیا جائے گا ۔غیر برانڈ کی غذائی اشیاء کو بھی جی ایس ٹی سے استثنیٰ دیا گیا ہے ۔ جب کہ برانڈ والی اور پیاک کیے گئے غذائی اشیاء پر 5 فیصد شرح عائد کی جائے گی ۔ کسٹرڈ پاوڈر ، آئیل کیک ، دھوپ بتی اور اسی طرح کی دیگر اشیاء ، پلاسٹک رین کوٹ ، ربر بینڈس ، رائس ربر رولس برائے دھان کی نکاسی ، کمپیوٹرس مانیٹرس اور کچن گیاس لائیٹر کے علاوہ جھاڑو اور بروشس سستے ہوجائیں گے ۔ جی ایس ٹی کے تحت دیگر تین جی ایس ٹی آر ۔ 1 یا سیلس ریٹرن کے ادخال کے لیے تاریخ میں توسیع دی گئی ہے ۔ ماہ جولائی اس کی آخری تاریخ تھی لیکن اب اسے 10 اکٹوبر تک توسیع دی گئی ہے ۔ جیٹلی نے کہا کہ دیگر تین ریٹرنس داخل کرنے کے لیے رہنمایانہ خطوط میں بھی توسیع کی گئی ہے ۔ جی ایس ٹی پر عمل آوری کا کام بہت بڑا ہے اس کے لیے وقت درکار ہوگا ۔ جیٹلی نے مزید کہا کہ کھلے طور پر فروخت کی جانے والی غذائی اشیاء پر 0 فیصد ٹیکس شرح عائد کیا جائے گا جبکہ برانڈیڈ اشیاء پر 5 فیصد ٹیکس لگایا جائے گا ۔۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT