Saturday , August 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ’’ جی حضوری پر نذرانہ، نہیں تو جرمانہ ‘‘ : تلگودیشم

’’ جی حضوری پر نذرانہ، نہیں تو جرمانہ ‘‘ : تلگودیشم

آئی اے ایس آفیسرس کی جانب سے قدم بوسی پر ٹی آر ایس حکمرانی کی من مانی کا اظہار

جگتیال ۔ /15فبروری، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ٹی آر ایس پارٹی کی 33ماہ کی حکمرانی ’’ نام بڑے درشن چھوٹے ‘‘ اور ’’ جی حضوری کرنے پر نذر انے نہیں تو جرمانے ‘‘ کے مترادف ہے ۔ IAS آفیسروں کی جانب سے قائدین کی قدم بوسی وغیرہ دیکھ کر من مانی حکمرانی نظر آرہی ہے، ان خیالات کا اظہار تلگودیشم ریاستی صدر مسٹر ایل رمنا نے آج صبح اپنی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس کو مخاطب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے ٹی آر ایس پارٹی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ تحریک کے موقع پر پروفیسر کودنڈا رام کو آگے رکھ کر اپنے سیاسی مفادات کو پورا کیا گیا، اس وقت گھر گھر ایک ملازمت دینے کا وعدہ کرنے والے آج اقتدار ملنے کے بعد وعدے سے مکر گئے۔ انہوں نے کہا کہ کے سی ار اور ہریش راؤ ماموں بھانجے ایک مرتبہ انتخابات کے موقع پر انتخابی منشور میں کئے گئے وعدے ’’ گھر گھر ملازمت ‘‘ کا مشاہدہ کریں۔ اور انتخابات کے موقع پر عوام سے کئے گئے وعدوں کو پورا کرنے تلگودیشم پارٹی ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا۔ تلگودیشم پارٹی کے سی آر کے حلقہ گجویل میں بڑے پیمانے پر پرجا پور یاترا کا انعقاد عمل میں لارہی ہے اگر اس میں رکاوٹ کرنے کی کوشش کی گئی تو تلگودیشم پارٹی خاموش نہیں بیٹھے گی۔ جمہوریت میں ہر ایک کو عوامی مفادات کیلئے حق و انصاف کیلئے احتجاج کرنے کا قانونی حق ہے۔ عوام میں شعور بیداری لائی جائے گی۔ حکومت کی غلط پالیسیوں کو عوام کے سامنے رکھا جائے گا۔ کے سی آر نے کہا تھا کہ ٹی آر ایس حکمرانی میں کسی قسم کے احتجاجی دھرنے، راستہ روکو وغیرہ نہیں ہوں گے۔ تلنگانہ تحریک میں ٹی آر ایس کا اہم رول سمجھ کر عوام نے اقتدار فراہم کیا لیکن عوام کی توقعات کو پورا کرنے میں ٹی آر ایس حکومت پوری طرح ناکام ہوچکی ہے۔ فیس ریمبرسمنٹ ادا نہ کرنے سے طلباء کے تعلیمی اسنادات کا حصول مشکل ہوگیا ہے اور پراجکٹوں کی تعمیر کے نام پر حصول اراضی قانون کا بیجا استعمال، غریبوں کی اراضی کم قیمت پر بے نامی حاصل کرنے کا الزام لگایا۔ ڈبل بیڈ روم اسکیم اور بیروزگار نوجوانوں کو روزگار ملازمت فراہم کرنے میں حکومت پر ناکامی کا الزام عائد کیا۔ اس موقع پر ٹاؤن پریسیڈنٹ بالے شنکر، جیا سری کونسلر، بوگہ وینکٹیشورلو، محمد کبیر الکٹریشن، محمد اصغر محمد خان، ذاکر، عبدالرحیم، سابقہ نظام شوگر فیکٹری ڈائرکٹر اور دیگر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT