Friday , July 28 2017
Home / Top Stories / جی 7 ممالک میں روس پر پابندیاں لگانے پر اتفاق نہ ہو سکا

جی 7 ممالک میں روس پر پابندیاں لگانے پر اتفاق نہ ہو سکا

روم ۔ 11 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) دنیا کے سات صنعتی طور پر ترقی یافتہ ملکوں کے گروپ جی 7 کے رکن ممالک شام کے تنازعے کے حوالے سے روس پر نئی پابندیاں لگانے پر اتفاق کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ان ممالک کے وزرائے خارجہ امریکی وزیرِ خارجہ ریکس ٹلرسن کے دورہِ ماسکو سے قبل شام کے مسئلے پر ایک متفقہ لائحہ عمل کے لیے تمام عالمی قوتوں کو راضی کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔منگل کو اٹلی میں ہونے والے اجلاس میں رکن ممالک اس بات پر متفق دکھائی دیے کہ شام کے صدر بشار الاسد کے برسرِاقتدار رہنے کی صورت میں شام کے تنازعے کا حل ممکن نہیں۔تاہم برطانیہ کی جانب سے روس اور شام کے سینیئر فوجی اہلکاروں کے خلاف پابندیاں عائد کرنے کی تجویز پر اتفاق نہیں ہو سکا۔یہ تجویز شام میں حال ہی میں کیمیائی ہتھیاروں کے مبینہ استعمال کے بعد سامنے آئی تھی۔ان حملوں میں 89 افراد ہلاک ہوئے تاہم شام نے باغیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال سے انکار کیا ہے۔ادھر امریکہ کا کہنا ہے کہ شام میں کیمیائی ہتھیاروں کے حملوں کے جواب میں کیے گئے امریکی فضائی حملوں میں شام کے قابلِ استعمال طیاروں میں سے 20 فیصد تباہ کر دیے گئے ہیں۔امریکہ کے وزیر دفاع جیمز میٹس کا کہنا ہے کہ شام کو کیمیائی ہتھیاروں کے دوبارہ استعمال کا مشورہ مہنگا پڑے گا۔اٹلی میں ہونے والے جی 7 ممالک کے اجلاس میں اس بارے میں غور کیا گیا کہ روس کو کس طرح شام کے ساتھ اتحاد چھوڑنے پر قائل کیا جائے۔امریکہ نے شام میں مشتبہ کیمیائی حملوں کے بعد شام کے ایک فوجی ہوائی اڈے پر 59 میزائل داغے تھے۔امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس امریکہ کی جانب سے جانچ پرکھ کر اٹھائے گئے اقدام کی والے سے ایندھن، بارود اور فضائی دفاع کی صلاحتیوں کو نشانہ بنایا گیا جس کی وجہ سے شام کے 20 فیصد فعال طیارے تباہ ہوئے۔ان کا مزید کہنا تھا ’شامی حکومت کے پاس شعیرات کے ہوائی اڈے پر اب جہازوں میں ایندھن بھرنے یا مسلح ہونے کی صلاحیت نہیں رہی اور نہ ہے رن وے قابلے استعمال رہا ہے۔شام فوج نے امریکی حملے کے بعد بڑے پیمانے پر نقصان کا اعتراف کیا تھا تاہم روسی وزیرِ دفاع کا کہنا تھا کہ صرف چھ شامی فضائی فوج کے جہاز اور کئی عمارتیں تباہ ہوئیں جبکہ شعیرات کے اڈے پر صرف 23 میزائل گرے۔جیمز میٹس نے کہا ان حملوں سے صاف ظاہر ہے کہ امریکہ شامی صدر بشارالاسد کی کی جانب سے معصوم شہریوں و کیمیائی ہتھیاروں سے نشانہ بنائے جانے کی حمایت نہیں کرتا۔خیال رہے کہ شام کے علاقے خان شیخون میں گذشتہ ہفتے مبینہ کیمیائی حملے میں 89 افراد ہلاک ہوئے۔امریکہ کا کہنا ہے کہ یہ حملہ شامی حکومت نے کیا ہے جبکہ شامی حکومت اس کا ذمہ دار باغی فورسز کو قرار دے رہی ہے اور روس کا کہنا ہے کہ امریکہ نے شامی حکومت کی جانب سے کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے کوئی ثبوت نہیں دیے ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT