Saturday , August 19 2017
Home / Top Stories / جے این یو :نجیب احمد کو ہلاک کرنے کی کوشش

جے این یو :نجیب احمد کو ہلاک کرنے کی کوشش

اے بی وی پی کے کارکنوں نے زدوکوب کیا اور دھمکیاں دیں: عینی گواہ
نئی دہلی۔/22اکٹوبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) جے این یو طالب علم نجیب احمد کو ہلاک کرنے کی کئی مرتبہ کوششیں ہوئیں۔ وہ گزشتہ ایک ہفتہ سے کیمپس سے لاپتہ ہیں۔ نجیب احمد کے ساتھی نے یہ بات بتائی جو اے بی وی پی کے چند حامیوں کے ساتھ ہوئی لڑائی کے وقت موجود تھے۔ نجیب احمد اسکول آف بائیو ٹکنالوجی کے طالب علم ہیں اور مبینہ طور پر کیمپس میں اے بی وی پی ارکان سے جھگڑے کے بعد گزشتہ ہفتہ سے لاپتہ ہیں۔ سرپرسوں کی جانب سے موصولہ شکایت پر پولیس نے اغواء اور غیر قانونی محروس رکھنے کا ایف آئی آر درج کیا ہے۔ جے این یو اسکول آف انٹرنیشنل اسٹڈیز میں ایم فل کے طالب علم شاہد رضا خاں نے بتایا کہ مجھے پہلی منزل سے کچھ آوازیں سنائی دیں اور جب میں نیچے پہنچا تو دیکھا کہ نجیب کے منہ اور ناک سے خون بہہ رہا تھا ہم نے فوری وارڈن کو اطلاع دی اور نجیب کو باتھ روم لے جانے میں مدد کی۔ انہوں نے کہا کہ چند طلباء یہاں آئے اور باتھ روم میں نجیب کو بری طرح زدوکوب کی اور چیخ رہے تھے کہ ہم تجھے نہیں چھوڑیں گے۔ اے بی وی پی اے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا ہے۔ جے این یو کے اے بی وی پی یونٹ صدر الوک سنگھ  نے کہا کہ اگر نجیب کو بری طرح زدوکوب کیا گیا تھا تو پھر وارڈن نے میڈیکل ٹسٹ کیوں نہیں کرایا؟ اس کی رپورٹس کہاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایسا کوئی حملہ ہی نہیں ہوا تھا۔ اس واقعہ کے بعد یونیورسٹی کیمپس میں پھر ایک بار صورتحال دھماکو ہوگئی ہے۔ طلباء نے وائس چانسلر ایم جگدیش کمار اور دیگر سینئر عہدیداروں کا انتظامیہ کی لاپرواہی اور بے عملی کے خلاف 20گھنٹوں تک محاصرہ کررکھا تھا۔ طلباء کے احتجاج کے بعد وزیر داخلہ نے دہلی پولیس کو طالب علم کا پتہ چلانے کیلئے خصوصی تحقیقاتی ٹیم ( ایس آئی ٹی ) تشکیل دینے کی ہدایت دی تھی۔

TOPPOPULARRECENT