Thursday , April 27 2017
Home / Top Stories / حج سبسیڈی برخواست کرنے کی تجویز سے دستبرداری کا مطالبہ

حج سبسیڈی برخواست کرنے کی تجویز سے دستبرداری کا مطالبہ

مرکزی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی کو ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کا مکتوب
حیدرآباد ۔ 14 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز ) : ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ محمد محمود علی نے مرکزی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے حج سبسیڈی کو برخواست کرنے کی مخالفت کرتے ہوئے سبسیڈی کی رقم کو 690 کروڑ روپئے سے بڑھا کر 1000 کروڑ روپئے کرنے کی اپیل کی ۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ مرکزی حکومت کی جانب سے حج سبسیڈی پر نظر ثانی کے لیے تشکیل دی گئی 6 رکنی کمیٹی سے غریب مسلمانوں میں بے چینی پائی جارہی ہے کیوں کہ حج ایک اہم اور اسلامی فریضہ ہے اور مسلمانوں کے لیے انتہائی اہم خاص عبادت ہے ۔ ہر مسلمان اپنے دل میں ایک خواہش رکھتا ہے کہ زندگی میں کم از کم ایک مرتبہ حج کی سعادت اور مدینہ منورہ کی زیارت کرنے کا شرف حاصل کریں ۔ ہندوستان میں مسلمانوں کی کثیر تعداد معاشی معاملت میں انتہائی کمزور ہے ۔ کئی کمیٹیوں اور کمیشنوں کی رپورٹس میں اس کا انکشاف ہوا ہے ۔ باوجود اس کے اسلامی فریضہ کی ادائیگی کے لیے اپنی کمائی کے کچھ حصہ کا بچت کرتا ہے اور اس کو یہ امید رہتی ہے کہ حکومت کی جانب سے دی جانے والی سبسیڈی سے حج کی ادائیگی ان کے لیے معاون و مددگار ثابت ہوگی ۔ اگر اچانک مرکزی حکومت کی جانب سے حج سبسیڈی برخواست کردی جاتی ہے تو ادائیگی حج کے لیے مسلمانوں پر زائد مالی بوجھ عائد ہوجائے گا اور زندگی میں فریضہ حج ادا کرنے کا ان کا خواب محض ایک خواب ہی بن کر رہ جائے گا ۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے مرکزی حکومت سے اپیل کی کہ وہ مسلمانوں کے جذبات کا احترام کریں اور حج سبسیڈی برخواست کرنے کی تجویز سے فوری دستبرداری اختیار کرتے ہوئے حج سبسیڈی کی رقم 690 کروڑ سے بڑھاکر 1000 کروڑ روپئے کردیں تاکہ ہندوستانی عازمین کے سفر حج میں آسانی ہوسکے ۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ یہ ملک کے مسلمانوں کا ایک اہم مسئلہ ہے ۔ اگر ضرورت پڑی تو وہ دہلی پہنچ کر وزیراعظم نریندر مودی اور مرکزی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی سے ملاقات کرتے ہوئے حج سبسیڈی جاری رکھنے کے علاوہ اس میں مزید اضافہ کرنے کی بھی نمائندگی کریں گے ۔ محمد محمود علی نے مرکزی وزیر مختار عباس نقوی کو روانہ کردہ مکتوب میں بتایا کہ نئی ریاست ہونے کے باوجود حکومت تلنگانہ حجاج کرام کے لیے اطمینان بخش انتظامات کیے ہیں ۔ تقریبا 600 حجاج کے لیے رباط میں مفت قیام و طعام اور دیگر سہولیات کی فراہمی کے لیے نمائندگی کرتے ہوئے اس کو یقینی بنایا گیا جب کہ سابق حکومت کے دوران رباط میں اس طرح کے انتظامات کا کوئی نظم نہیں تھا ۔ چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر گنگا جمنی تہذیب کے علمبردار ہیں ۔ وہ حجاج کرام کو اللہ کا مہمان مانتے ہیں اور حج کے انتظامات میں خصوصی دلچسپی لیتے ہیں ۔ ان کا ایقان ہے کہ حجاج کی خدمت کرنے والوں کو بھی حج کا ثواب حاصل ہوتا ہے ۔ اس لیے وہ ممکنہ حد تک حجاج کرام کے لیے بہترین انتظامات کیلئے کوشاں رہتے ہیں ۔ جس کے باعث وہ ریاست کے تمام طبقات میں یکساں مقبول ہیں ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT