Sunday , August 20 2017
Home / عرب دنیا / حج و عمرہ کے باعث سعودی عرب کی معیشت مستحکم

حج و عمرہ کے باعث سعودی عرب کی معیشت مستحکم

عمرہ کرنے والوں کی تعداد میں زبردست اضافہ
آئندہ چار برسوں میں 1.20 کروڑ ہونے کی توقع
گذشتہ سال حج سے 12 ارب ڈالر کی آمدنی

جدہ ۔ 3 اگست (سیاست ڈاٹ کام) اقطاع عالم سے لاکھوں مسلمان ہر برس حج کرنے سعودی عرب آتے ہیں جس سے سعودی معیشت کو خاصی تقویت ملتی ہے۔تاہم بہت سے لوگوں کے ذہن میں یہ سوال آتا ہے کہ حج اور عمرہ کرنے کے لیے آنے والے عازمین سے سعودی عرب کو کتنی آمدنی ہوتی ہے اور سعودی عرب کی معیشت میں اس کا کتنا حصہ ہے۔اس کے لیے سب سے پہلے تو حج کے ارادے سے سعودی عرب جانے والے مسلمانوں کی کل تعداد نکالنی ہو گی۔ہر برس کتنے لوگ مکہ جاتے ہیں؟گذشتہ برس مجموعی طور پر 83 لاکھ لوگ حج کے لیے سعودی عرب آئے تھے۔ایک تو یہ کہ سال کے ایک خاص وقت میں ہی حج کیا جاتا ہے اور دوسری بات یہ کہ سعودی عرب نے حج کے لیے آنے والوں کی تعداد کو قابو میں رکھنے کے لیے ہر ملک کا ایک کوٹا طے کر رکھا ہے۔حج کرنے والوں کی ایک بڑی تعداد سعودی عرب میں رہنے والے لوگوں کی بھی ہوتی ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ ان میں سے بہت سے لوگ مختلف ممالک کے شہری ہوتے ہیں۔گذشتہ دس سالوں میں سعودی عرب کے اندر سے حج کرنے والے مسلمانوں کی تعداد دوسرے ممالک سے آنے والے حجاج کرام کے مقابلے میں تقریبا نصف رہی ہے۔دنیا بھر میں مسلمانوں کی جتنی آبادی ہے، اس کی محض دو فیصد آبادی ہی سعودی عرب میں رہتی ہے۔مسلمان پورے سال عمرہ کے لیے جاتے رہتے ہیں۔ پچھلے سال 60 لاکھ سے زیادہ لوگوں نے عمرہ کیا۔سعودی عرب جانے والے مسلمانوں میں 80 فیصد سے زیادہ لوگ وہاں عمرہ کرنے جاتے ہیں۔ سات سال پہلے عمرہ جانے والوں کی تعداد 40 لاکھ تھی اور سعودی عرب کو امید ہے کہ آنے والے چار سالوں میں یہ تعداد ایک کروڑ 20 لاکھ ہو جائے گی۔گذشتہ سال سعودی عرب کو حج سے 12 ارب ڈالر کی براہ راست آمدنی ہوئی۔ پاکستانی کرنسی میں یہ رقم 1264 ارب روپے سے زیادہ بنتی ہے۔ سعودی عرب جانے والے حجاج کرام نے وہاں جا کر تقریباً 23 ارب ڈالر کی رقم خرچ کی۔

 

TOPPOPULARRECENT