Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / حج کمیٹی کو یکمشت 25 ہزار کروڑ کا فنڈ مطلوب

حج کمیٹی کو یکمشت 25 ہزار کروڑ کا فنڈ مطلوب

ممبئی19اگست(سیاست ڈاٹ کام ) مہاراشٹر حج کمیٹی کے چیئرمین اور حج کمیٹی آف انڈیا کے رکن حاجی ابراہیم شیخ بھائی جان نے آج ممبئی سے عازمین حج کے پہلے قافلے کی روانگی کے موقع پر مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت حاجیوں کیلئے یکمشت 25 ہزار کروڑروپے کا فنڈ دیا جائے کیونکہ 2012ء میں دیئے گئے سپریم کورٹ کے فیصلہ کے مطابق حج سبسیڈی مرحلہ وارکم کرنا ہے اورآخری سبسیڈی 2022ء تک ہی دی جا سکتی ہے، لہٰذا اندیشہ ہے کہ سبسیڈی کی رقم کا خاتمہ ہو گا اور اس سے حج کے اخراجات کافی بڑھ جائیں گے نیز یکمشت حج فنڈ کی رو سے ہی مسلمانان ہند اپنے اس اہم مذہبی فریضہ کو با آسانی ادا کر سکیں گے ۔ انہوںنے کہا کہ مہاراشٹرا اسٹیٹ حج کمیٹی نے اس سلسلے میں ایک قرار داد منظور کر کے وزیراعظم نریندرمودی جی،متعلقہ وزارت اور متعلقہ وزیر کو مکتوب روانہ کیا ہے اور مطلع کیا ہے کہ2022ء میں حج سبسڈی ختم ہوجانے کے نتیجے میں سفر حج کافی مہنگا ہوجائے گا جبکہ فی الحال عزیزیہ کٹیگری میں ایک عازم حج کو ایک لاکھ 94ہزار400 روپے اورگرین کٹیگری میں 2لاکھ 7ہزارروپے ادا کرنے پڑتے ہیں ،لیکن اگر سبسیڈی ختم ہوجائے گی تو ایک عازم حج کو ساڑھے تین لاکھ روپے ادا کرنا ہوگا اور یہی وجہ ہے کہ فریضہ حج کی ادائیگی عام آدمی کی پہنچ سے باہر ہوجائے گا ۔حاجی ابراہیم نے مزید کہا کہ یہی وجہ ہے کہ انہوںنے وزیراعظم نریندر مودی کو ایک مکتوب روانہ کرکے ایک بار 25ہزارکروڑکا فنڈ دینے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ حج پرسے مہنگائی کا بوجھ کم ہو سکے ۔

TOPPOPULARRECENT