Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / حج 2016ء کیلئے تلنگانہ و آندھراکے عازمین کے کوٹہ میں اضافہ

حج 2016ء کیلئے تلنگانہ و آندھراکے عازمین کے کوٹہ میں اضافہ

سوٹ کیس کی شرط سے دستبرداری، عازمین کو قربانی کا اختیار، پروفیسر ایس اے شکور کی نمائندگی پر سنٹرل حج کمیٹی کا فیصلہ
حیدرآباد۔ 21 ۔ نومبر (سیاست نیوز) سنٹرل حج کمیٹی نے سال 2016 ء میں عازمین حج کا انتخاب 2011 مردم شماری کے اعتبار سے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ حج کمیٹی نے عازمین حج کو آئندہ سال سے سوٹ کیس کی فراہمی کے منصوبہ سے دستبرداری اختیار کرلی ہے۔ حج 2016 ء میں حج کمیٹی سے روانہ ہونے والے عازمین حج کیلئے قربانی کا نظم اختیاری کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ تلنگانہ حج کمیٹی کے اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور نے ان اہم امور پر سنٹرل حج کمیٹی کی توجہ مبذول کرائی تھی اور آج سنٹرل حج کمیٹی نے اپنے اجلاس میں ان تجاویز سے اتفاق کرلیا۔ سنٹرل حج کمیٹی کے فیصلہ سے آئندہ سال تلنگانہ اور آندھراپردیش کیلئے حج  کوٹہ میں اضافہ ہوگا۔ اس کے علاوہ عازمین حج کو سوٹ کیس کے حصول اور قربانی کیلئے حج کمیٹی میں رقم جمع کرنے کی شرط سے استثنیٰ حاصل ہوجائے گا جو عازمین کیلئے بڑی راحت کی خبر ہے۔ حج 2015 ء میں ریاستوں کے حج کوٹہ کے الاٹمنٹ میں مردم شماری 2011 ء کو پیش نظر نہیں رکھا گیا تھا جس کے باعث تلنگانہ کے ساتھ کافی ناانصافی ہوئی اور زائد مسلم آبادی کے باوجود صرف 2760 کوٹہ الاٹ کیا گیا جبکہ 16963 درخواستیں داخل کی گئی تھیں۔ سنٹرل حج کمیٹی نے خادم الحجاج کے انتخاب کے طریقہ میں تبدیلی سے اتفاق کرلیا ہے ۔ اس سلسلہ میں نئے قواعد کو مدون کیا جارہا ہے۔ آئندہ سال سے ہر 300 عازمین حج کیلئے ایک خادم الحجاج کے بجائے ہر 200 عازمین کیلئے ایک خادم الحجاج روانہ کیا جائے گا۔ سنٹرل حج کمیٹی کے چیف اگزیکیٹیو آفیسر عطاء الرحمن نے پروفیسر ایس اے شکور کو ان کی تجاویز قبول کئے جانے کی اطلاع دی۔ دو دن قبل ممبئی میں ملک کی تمام حج کمیٹیوں کے صدورنشین اور اگزیکیٹیو آفیسرس کے اجلاس میں پروفیسر ایس اے شکور نے یہ تجاویز پیش کی تھیں۔ سنٹرل حج کمیٹی نے حج 2016 ء کے انتظامات کے سلسلہ میں کئی اہم تبدیلیوں کا فیصلہ کیا ہے۔ تلنگانہ اور آندھراپردیش کیلئے اچھی خبر یہ ہے کہ آئندہ سال دونوں ریاستوں کے حج کوٹہ میں قابل لحاظ اضافہ ہوگا۔ گزشتہ سال آندھراپردیش میں 3840 درخواستیں داخل کی گئی تھیں جبکہ حج کوٹہ 2023 الاٹ کیا گیا تھا۔ اس طرح 50 فیصد سے زائد درخواست گزار سعادت حج کیلئے روانہ ہوئے تھے ۔ حیدرآباد امبارگیشن پوائنٹ سے تلنگانہ کے 2969 ، آندھراپردیش 1826 اور کرناٹک کے 656 عازمین حج روانہ ہوئے تھے۔ سنٹرل حج کمیٹی کے مجموعی کوٹہ ایک لاکھ 25 ہزار ہے تاہم 2015 ء میں حکومت سعودی عرب نے 25000 کی تخفیف کردی تھی ۔ توقع ہے کہ 2016 ء میں اس کمی کو بحال کردیا جائے گا۔ حجاج کرام نے حج کمیٹی کی جانب سے فراہم کردہ سوٹ کیس کے غیر معیاری ہونے کی شکایت کی تھی اور اس مسئلہ کو پروفیسر ایس اے شکور نے اجلاس میں اٹھایا تھا۔ اب آئندہ سال سے حج کمیٹی سوٹ کیس فراہم نہیں کرے گی۔ حج 2015 ء میں عازمین حج سے قربانی کیلئے 469 ریال وصول کئے گئے تھے لیکن آئندہ سال عازمین کو اختیار رہے گا کہ وہ اگر چاہیں تو اپنے طور پر قربانی کا انتظام کرسکتے ہیں ۔ پروفیسر ایس اے شکور نے ایک ریاست کے عازمین حج کو ایک ہی مقام کی عمارتوں میں جگہ فراہم کرنے اور روزآنہ صرف دو فلائیٹس کا انتظام کرنے کی تجویز پیش کی تھی جس سے سنٹرل حج کمیٹی نے اتفاق کرلیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT