Thursday , August 24 2017
Home / شہر کی خبریں / حج 2017ء کیلئے تلنگانہ کوٹہ میں اضافہ کرنے کا تیقن

حج 2017ء کیلئے تلنگانہ کوٹہ میں اضافہ کرنے کا تیقن

ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کی نمائندگی پر مرکزی وزیراقلیتی امور مختارعباس نقوی کا مثبت ردعمل
حیدرآباد۔/7جنوری، ( سیاست نیوز) مرکزی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ محمد محمود علی کو تیقن دیا کہ حج 2017 کے تلنگانہ کوٹہ میں اضافہ کے اقدامات کئے جائیں گے۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے آج مختار عباس نقوی سے ربط قائم کرتے ہوئے تلنگانہ کیلئے کم از کم 5000 عازمین کا کوٹہ الاٹ کرنے کی خواہش کی کیونکہ تلنگانہ میں مسلم آبادی کے لحاظ سے موجودہ کوٹہ انتہائی ناکافی ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ ہندوستان کیلئے مجموعی کوٹہ کے اضافہ کے بعد تلنگانہ کے کوٹہ میں 20فیصد کا اضافہ کیا گیا ہے۔ اگرچہ مرکزی حکومت کا یہ اقدام قابل ستائش ہے لیکن صرف 20فیصد کا اضافہ کافی نہیں۔ مرکز کو چاہیئے کہ وہ تلنگانہ میں مسلم آبادی اور حج درخواستوں کی تعداد کو دیکھتے ہوئے کم سے کم 5000 عازمین کا کوٹہ الاٹ کرے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست کی تقسیم کے بعد مسلم آبادی کا لحاظ کئے بغیر تلنگانہ اور آندھرا پردیش میں حج کوٹہ الاٹ کیا گیا۔ تلنگانہ میں مسلمانوں کی آبادی 13 تا14 فیصد ہے جس کے باوجود انہیں آندھرا پردیش سے کم کوٹہ الاٹ ہوا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ موجودہ کوٹہ 2800 ناکافی ہے کیونکہ گذشتہ سال مجموعی طور پر 17000 سے زائد درخواستیں داخل کی گئی تھیں۔ مختار عباس نقوی نے ڈپٹی چیف منسٹر کو تیقن دیا کہ وہ اپنے دورہ سعودی عرب سے واپسی کے بعد اس مسئلہ پر بات چیت کریں گے اور ضرورت پڑنے پر حیدرآباد کا دورہ کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی اور اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے بات چیت کریں گے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے انہیں حیدرآباد کا دورہ کرتے ہوئے حج انتظامات کا جائزہ لینے کی دعوت دی۔ انہوں نے بتایا کہ جن ریاستوں میں حج کوٹہ کی تکمیل نہیں ہوتی ان کا اضافی کوٹہ تلنگانہ کو الاٹ کیا جانا چاہیئے۔اسی دوران ڈپٹی چیف منسٹر نے وقف بورڈ کی کارکردگی بہتر بنانے اور اوقافی جائیدادوں کے تحفظ اور آمدنی میں اضافہ کا عزم ظاہر کیا۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ کو حکومت ہر اعتبار سے مستحکم کرنا چاہتی ہے تاکہ بورڈ اپنے اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے ناجائز قابضین کے خلاف کارروائی کرسکے۔ اس کے علاوہ اوقافی اداروں کی آمدنی میں اضافہ کی حکمت عملی تیار کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اہم اوقافی جائیدادوں کا کرایہ انتہائی معمولی ہے اور کرایوں میں اضافہ کے ذریعہ بورڈ کی آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے امید ظاہر کی کہ اندرون چھ ماہ بورڈ کی کارکردگی میں بہتری ہوگی اور آمدنی میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ ناجائز قابضین کے خلاف سخت کارروائی کی ہدایت دی گئی ہے اور قابضین چاہے کتنے ہی طاقتور کیوں نہ ہوں انہیں بخشا نہیں جائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ وقف بورڈ میں قابل اور اہل عہدیداروں اور ملازمین کا تقرر کرنے پر سنجیدگی سے غور کیا جارہا ہے ۔ بورڈ میں فی الوقت نہ صرف اسٹاف کی کمی ہے بلکہ تعلیم یافتہ اور اہل اسٹاف نہ ہونے کے سبب اوقافی جائیدادوں کے تحفظ میں دشواری ہورہی ہے۔ حکومت بہت جلد بورڈ کے 4 نامزد ارکان کے ناموں کا اعلان کرتے ہوئے تشکیل کے احکامات جاری کردے گی۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ اپنے وعدہ کے مطابق مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے میں سنجیدہ ہیں اور بی سی کمیشن کی رپورٹ ملتے ہی اسمبلی میں چیف منسٹر حکومت کے موقف کا اعلان کریں گے۔ انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ چیف منسٹر مرکزی حکومت پر اپنا اثر و رسوخ استعمال کرتے ہوئے تحفظات کے فیصد میں اضافہ کو یقینی بنائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT