Saturday , July 22 2017

حدیث

معجزات رسول اکرم ﷺ
عَنْ عَبْدِ ﷲِ رضي اللہ عنه قَالَ : کُنَّا نَعُدُّ الآيَاتِ بَرَکَةً، وَأَنْتُمْ تَعُدُّوْنَهَا تَخْوِيْفًا، کُنَّا مَعَ رَسُوْلِ ﷲِ صلي اللہ عليه وآله وسلم فِي سَفَرٍ، فَقَلَّ الْمَاءُ، فَقَالَ : اطْلُبُوا فَضْلَةً مِنْ مَاءٍ. فَجَاؤُوْا بِإِنَاءٍ فِيْهِ مَاءٌ قَلِيْلٌ، فَأَدْخَلَ يَدَهُ فِي الْإِنَاءِ ثُمَّ قَالَ : حَيَّ عَلَي الطَّهُوْرِ الْمُبَارَکِ، وَالْبَرَکَةُ مِنَ ﷲِ. فَلَقَدْ رَأَيْتُ الْمَاءَ يَنْبُعُ مِنْ بَيْنِ أَصَابِعِ رَسُوْلِ ﷲِ صلي اللہ عليه وآله وسلم، وَلَقَدْ کُنَّا نَسْمَعُ تَسْبِيْحَ الطَّعَامِ وَهُوَ يُؤْکَلُ. رَوَاهُ الْبُخَارِيُّ وَالتِّرْمِذِيُّ.
وَقَالَ أَبُوْعِيْسَي : هَذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ صَحِيْحٌ.
’’حضرت عبداﷲ (بن مسعود) رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم تو معجزات کو برکت شمار کرتے تھے تم انہیں خوف دلانے والے شمار کرتے ہو۔ ہم ایک سفر میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ہمراہ تھے کہ پانی کی قلت ہو گئی۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : کچھ بچا ہوا پانی لے آؤ، لوگوں نے ایک برتن آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت اقدس میں پیش کیا جس میں تھوڑا سا پانی تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنا دستِ اقدس اس برتن میں ڈالا اور فرمایا : پاک برکت والے پانی کی طرف آؤ اور برکت اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے۔ میں نے دیکھا کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مبارک انگلیوں سے (چشمہ کی طرح) پانی ابل رہا تھا۔ علاوہ ازیں ہم کھانا کھاتے وقت کھانے سے تسبیح کی آواز سنا کرتے تھے۔‘‘

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT