Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / حرم شریف میں باجماعت ایک رکعت کا ثواب 27 لاکھ رکعتوں کے برابر

حرم شریف میں باجماعت ایک رکعت کا ثواب 27 لاکھ رکعتوں کے برابر

عازمین کو ڈسپلن ، صبر و تحمل اور ایثار و قربانی کامظاہرہ کرنے کا مشورہ : مولانا اعظم علی صوفی اوردیگر کا خطاب
حیدرآباد 16 اگسٹ (پریس نوٹ) تلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی کے زیراہتمام کل ہند جمعیۃ المشائخ کے اشتراک سے عازمین حج کا مرکزی تربیتی اجتماع آج جامع مسجد اعظم پورہ میں زیرصدارت پروفیسر ایس اے شکور اسپیشل آفیسر تلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی منعقد ہوا۔ صدر کل ہند جمعیۃ المشائخ مولانا قاضی سید شاہ اعظم علی صوفی قادری نے فضائل و مناسک حج و عمرہ تفصیل کے ساتھ بیان کئے۔ انھوں نے عازمین کو مشورہ دیا کہ وہ حج کے دوران فسق و فجور اور لڑائی جھگڑے سے باز رہیں کیوں کہ ایسا حج کرنے والا گناہوں سے دھل کر ایسا پاک و صاف ہوجاتا جیسے ابھی پیدا ہوا ہے۔ انھوں نے کہاکہ صاحب استطاعت ہوتے ہی حج فرض ہوجاتا ہے۔ اس کے باوجود حج ادا نہ کرنے کی صورت میں کئی وعیدیں آئی ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ عازمین حرم شریف میں ہر نماز باجماعت ادا کریں وہاں ایک رکعت تنہا پڑھنے کا ثواب ایک لاکھ رکعتیں پڑھنے کے برابر اور باجماعت پڑھنے کاثواب 27 لاکھ  رکعتیںپڑھنے کے برابر ہوتا ہے۔ انھوں نے ماڈلس، چارٹس اور سلائیڈس کے ذریعہ مناسک حج و عمرہ کی تشریح کی۔ پروفیسر ایس اے شکور اسپیشل آفیسر حج کمیٹی نے عازمین میں صبر و تحمل کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہاکہ عازمین ابھی سے ہر مرحلہ میں صبر کا مظاہرہ کریں۔ حج کے سفر میں دشواریاں اور مشکلات کا پیش آنا تو ضروری ہے۔ اگر صبر کی عادت نہ ہو تو پھر بڑی دشواری ہوگی۔ انھوں نے کہاکہ عازمین کی روانگی کے انفرادی شیڈول کا بہت جلد اعلان کیا جائے گا۔ آئندہ اجتماع میں اس کی تفصیلات بیان کی جائیں گی۔ 2 ستمبر سے فلائٹس کی روانگی کا آغاز ہورہا ہے اور 8 ستمبر کو حج کیمپ اختتام کو پہونچے گا۔ انھوں نے کہاکہ حج کیمپ کے دوران ایک دن میں تین فلائٹس روانہ ہوں گی جس کی وجہ سے حج ہاؤز میں کافی ہجوم رہے گا اس لئے عازمین ڈسپلن، صبر و تحمل اور ایثار و قربانی کے جذبہ سے کام لیں۔ مولانا سید ابوالفتح بندگی بادشاہ ریاض قادری جوائنٹ سکریٹری کل ہند جمعیۃ المشائخ نے عازمین سے کہاکہ سفر پر جانے سے قبل وہ خوب پیدل چلنے کی عادت ڈال لیں۔ ایکسلیٹر کا استعمال سیکھ لیں، اپنے ریال، دستاویزات اور ساز و سامان کی حفاظت کرتے رہیں۔ صبر و تحمل ہی سفر حج کو آسان بنانے کی کنجی ہے۔ اگر صبر کریں تو سفر آسان ہوگا۔ مولانا سید مصطفی سعید قادری نے روضہ نبوی صلی اللہ علیہ و سلم کی زیارت کے آداب بیان کرتے ہوئے کہاکہ مسجد نبوی میں 40 نمازیں ادا کریں اور حضور کریم صلی اللہ علیہ و سلم کے روبرو اپنے گناہوں کی مغفرت کی سفارش پیش کریں۔ حضور صلی اللہ علیہ و سلم کے صدقہ میں یثرب، طیبہ بن گیا اور اب تک اس کی مٹی میں شفاء ہے۔ مدینہ شریف میں داخلہ کے ساتھ ہی رحمت و انوار کی بارش کو دیکھا اور محسوس کیا جاسکتا ہے۔ انھوں نے مدینہ منورہ کے دیگر مقدس مقامات کی زیارت کرنے کا بھی مشورہ دیا۔ جلسہ کا آغاز الحاج قاری شاہ محمد مسعود احمد کی قرأت کلام پاک سے ہوا۔ اس موقع پر مولانا سید شاہ راجو حسینی ثانی، مولانا احمد شاہ چشتی، مولانا سید شاہ احمد نوراللہ حسنی حسینی قادری معتمد جمعیۃ، مولانا شاہ محمد فیض اللہ عبدالباری خازن، مولانا احمد عبدالحکیم صدیقی قادری نائب صدر، مولانا سید شاہ محمد بہاء الدین نقشبندی، مولانا افضل مرزا چشتی شمیم پاشاہ، مولانا شاہ محمد احمد اللہ اقبال چشتی، مولانا سید احمد پادشاہ قادری ملتانی، مولانا ڈاکٹر سید شاہ مرتضیٰ علی صوفی حیدر قادری، مولانا سید خلیق الرحمن عمران ہاشمی، مولانا سید شاہ سمیع اللہ حسینی بندہ نوازی، مولانا سید نظام الدین ہارونی، مولانا سید خلیل احمد قادری، مولانا سید قدیر شاہ، مولانا سید شاہ مظفر علی اویس قادری، مولانا سید شاہ مجتبیٰ علی بشیر قادری اور دیگر علماء و مشائخین کے علاوہ جناب عرفان شریف (حج کمیٹی) موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT