Thursday , August 24 2017
Home / ہندوستان / حصول اراضی قانون سرمائی اجلاس سے قبل پارلیمنٹ میں پیش ہونا ناممکن

حصول اراضی قانون سرمائی اجلاس سے قبل پارلیمنٹ میں پیش ہونا ناممکن

نئی دہلی۔10اگست ( سیاست ڈاٹ کام ) حساس حصول اراضی قانون پارلیمنٹ میں سرمائی اجلاس سے قبل پیش نہیں کیا جاسکے گا ۔ مشترکہ کمیٹی برائے پارلیمنٹ اقدامات کا جائزہ لے رہی ہے تاکہ اپنی رپورٹ کو قطعیت دینے کیلئے مزید مہلت طلب کرسکے ۔ جب کہ کانگریس اور ٹی ایم سی ارکان اس کی بعض دفعات کا مطالعہ کرنے مزید مہلت چاہتے ہیں ۔سرمائی اجلاس کے پہلے ہفتہ تک توسیع کی خواہش کرنے کا فیصلہ بی جے پی اور کانگریس کے درمیان گرما گرم زبانی تکرار کے بعد منظر عام پرآیا ۔ جب کہ مسودہ قانون کی متنازعہ دفعات کے بارے میں برسراقتدار اور اپوزیشن پارٹی میں شدید اختلافات ہیں ۔ یہ دفعات حاصل کی ہوئی اراضی کیلئے معاوضہ کی ادائیگی کی دفعات کے متعلق ہیں جو 1894ء کے قانون کے مطابق ہیں ‘ جنہیں یو پی اے حکومت کے منظورہ 2013ء کے قانون میں تبدیل کردیا گیا تھا ۔ کانگریس اور ٹی ایم سی ارکان کے مطالبات تسلیم کرتے ہوئے قانون کی بعض دفعات کا تفصیلی مطالعہ کرنے کیلئے صدر نشین ایس ایس اہلوالیہ نے فیصلہ کیا کہ کمیٹی کو اپنی رپورٹ جاریہ اجلاس میں جو 13اگست کو ختم ہوجائے گا پیش نہیں کرنا چاہیئے ۔ اس کے بجائے یہ رپورٹ پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں پہلے ہفتہ کے دوران پیش کی جائے گی ۔ کمیٹی کو قبل ازیں کل تک کی توسیع دی گئی تھی تاکہ وہ رپورٹ پیش کرے جب کہ کانگریس اور ٹی ایم سی نے مزید مہلت کا مطالبہ کیا ۔ اہلوالیہ نے فیصلہ کیا کہ اسپیکر لوک سبھا سمترا مہاجن سے ایک اور توسیع طلب کریں گے تاکہ اتفاق رائے کے ساتھ رپورٹ پیش کی جاسکے ۔ اس کا مطلب یہ ہوگا کہ یہ مسودہ قانون پارلیمنٹ میں صرف بہار اسمبلی انتخابات کے بعد ہی پیش کیا جاسکے گا جو زرعی ریاست سمجھی جاتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT