Thursday , August 24 2017
Home / عرب دنیا / حلب میں گھمسان لڑائی ‘ تین ہفتوں میں 300 ہلاکتیں

حلب میں گھمسان لڑائی ‘ تین ہفتوں میں 300 ہلاکتیں

عام شہریوں کی اکثریت ۔ مہلوکین میں 49 بچے بھی شامل ۔ حقوق انسانی گروپ کا دعوی
حلب 20 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) شام کے تباہ حال شہر حلب میں تین ہفتوں سے جاری تشدد کے دوران زائد از 300 عام شہری ہلاک ہوگئے ہیں۔ یہ ہلاکتیں وہاں جاری لڑائی اور بمباری میں ہوئی ہے۔ حقوق انسانی کے ایک گروپ نے یہ بات بتائی ۔ شام کے دوسرے بڑے شہر حلب کیلئے 31 جولائی سے ہو رہی لڑائی میں اب تک مرنے والوں کی تعداد 333 ہوگئی ہے ۔ باغیوں کی جانب سے اپنے کنٹرول والے اضلاع کے سرکاری محاصرہ کو توڑنے کیلئے بڑے پیمانے پر کوششیں شروع کی ہیں۔ ہلاکتوں میں 165 عام شہری شامل ہیں۔ ان میں 49 بچے بھی شامل ہیں جو اپوزیشن کی فائرنگ میں ہلاک ہوئے ہیں۔ حقوق انسانی گروپ کا کہنا ہے کہ مزید 168 عام شہری روسی اور شامی حکومت کے فضائی حملوں میں ہلاک ہوئے ہیں۔ یہ کارروائیاں باغیوں کے کنٹرول والے مشرقی علاقوں میں کی گئی تھیں۔ روس کی جانب سے صدر بشار الاسد کی افواج کی مدد کیلئے شام میں ستمبر 2015 سے فضائی حملے کئے جا رہے ہیں۔ برطانیہ سے کام کرنے والے گروپ کا ادعا ہے کہ مزید 109 افراد اس مدت کے دوران سارے حلب صوبہ میں ہوئی بمباری کے مختلف وقاعات میں ہلاک ہوئے ہیں۔

حلب شہر کو کبھی شام کے معاشی مرکز کا مقام حاصل تھا اور وہ وسط 2012 سے تباہی کی راہ پر ہے جہاں جنگی طیارے بمباری کر رہے ہیں اور باغیوں کی جانب سے بھی راکٹس وغیرہ داغے جا رہے ہیں۔ حلب کے جنوبی کناروں پر ہفتے کو بمباری کی گئی تھی اور سارے شہر میں گھمسان کی لڑائی ہونے کی اطلاعات مل رہی ہیں۔ اس تشدد کے نتیجہ میں باغیوں کے شہر سے باہر جانے کے راستے جزوری طور پر ناقابل استعمال ہوگئے ہیں اور شہر میں غذائی اجناس اور دوسری اشیا کے ٹرکس بھی داخل نہیں ہو پا رہے ہیں۔ شہر کے شمالی اضلاع میں تقریبا ڈھائی لاکھ افراد کی آبادی ہے جبکہ مزید 12 لاکھ افراد مغربی علاقوں میں رہتے ہیں۔ گروپ کے سربراہ رامی عبدالرحمن کا کہنا ہے کہ یہاں کئی جھڑپیں ہو رہی ہیں اور فضائی حملے کئے جا رہے ہیں۔ سرکاری افواج کی بہتر پیشرفت بھی ہوئی ہے ۔ وہ اپنے ٹھکانوں کو مزید مستحکم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ گروپ کا کہنا ہے کہ یہاں حملے کرنے والے طیاروں کی ان کی ساخت ‘ مقام اور پرواز کی ہئیت کے اعتبار سے شناخت کی جا رہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT