Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / حلقہ اسمبلی چندرائن گٹہ کے مختلف بستیوں میں پانی کی شدید قلت

حلقہ اسمبلی چندرائن گٹہ کے مختلف بستیوں میں پانی کی شدید قلت

شہریوں کو مشکلات، منتخبہ نمائندوں سے نمائندگیاں بھی بے سود ثابت، عوام کی شکایت
حیدرآباد ۔ 14 اگست (سیاست نیوز) حلقہ اسمبلی چندرائن گٹہ کے علاقہ جنگم میٹ کے اطراف و اکناف کے علاقوں میں پانی کی شدید قلت شہریوں کیلئے وبال جان بنی ہوئی ہے۔ جنگم میٹ، فلک نما، قادری چمن، انجن باؤلی، چھاؤنی غلام مرتضیٰ کے علاقوں میں پانی کی عدم سربراہی و دیگر مسائل کے سبب شہریوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ عوام کی خدمت منتخبہ عوامی نمائندوں کی ذمہ داری ہوتی ہے۔ اس بات کا عملی ثبوت دینے کیلئے یہ ضروری ہیکہ علاقہ کے عوام کو بنیادی سہولتوں کی فراہمی یقینی بنائی جانی چاہئے۔ چھاؤنی غلام مرتضیٰ کے مکینوں کی جانب سے کئی مرتبہ متعلقہ منتخبہ نمائندوں کی توجہ اس جانب مبذول کروائی جاچکی ہے لیکن اس کے باوجود بھی کوئی کارروائی نہ ہونے کے سبب عوام شدید قلت آب سے دوچار ہیں۔ بتایا جاتا ہیکہ جی ایچ ایم سی وارڈ نمبر 45 کے علاقوں میں پانی کی سربراہی میں بے قاعدگی اور عدم سربراہی کی شکایات متعلقہ عوامی نمائندوں کے علاوہ سیوریج بورڈ کے عہدیداروں سے کی جاچکی ہے لیکن اس کے باوجود بھی مسئلہ کے حل کیلئے کوئی عملی اقدامات نہیں کئے گئے بلکہ گذشتہ 6 ماہ سے ان علاقوں میں رہنے والے پانی کی قلت سے پریشان ہیں۔ کندیکل گیٹ، غلام مرتضیٰ چھاؤنی سے تعلق رکھنے والے شہریوں نے اس سلسلہ میں ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق و انفارمیشن ٹیکنالوجی مسٹر کے ٹی راما راؤ کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے اس مسئلہ کے حل کی خواہش کی ہے اور مکتوب میں اس بات سے بھی واقف کروایا گیا کہ متعدد مرتبہ نمائندگیوں کے باوجود مسئلہ حل نہ کئے جانے کے سبب وہ ریاستی وزیر سے نمائندگی پر مجبور ہوئے ہیں اور توقع ہیکہ ریاستی حکومت سنہرا تلنگانہ کے خواب کو پورا کرنے کیلئے پرانے شہر کے ان علاقوں میں بنیادی سہولتوں کی فراہمی کو یقینی بنانے کے اقدامات کرے گی۔ پرانے شہر میں کئی علاقے ایسے ہیں جہاں پانی کی سربراہی کے متعلق شکایات منظرعام پر آرہی ہیں لیکن اس کے باوجود منتخبہ عوامی نمائندے اس مسئلہ پر توجہ دینے اور مسائل کے حل کے بجائے ان مسائل کو نظرانداز کررہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT