Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / حکومت اور چیف منسٹر کے امتحان کا آغاز

حکومت اور چیف منسٹر کے امتحان کا آغاز

حیدرآباد۔/12اگسٹ، ( سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے مسلم تحفظات کے مسئلہ پر سدھیر کمیشن کی رپورٹ پر قانونی رائے حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جو خوش آئند ہے۔ اس سے اُمید جاگی ہے کہ چیف منسٹر اپنے وعدہ کی تکمیل کی سمت پیشقدمی کریں گے۔ مسلمانوں کو وعدہ کے مطابق تحفظات کی فراہمی کے سلسلہ میں ایک طرف چیف منسٹر کے امتحان کا آغاز ہوگیا تاہم انہوں نے امتحانی پرچہ کی جانچ کیلئے جس ممتحن کا انتخاب کیا ہے ان کی تحفظات کے حق میں رائے سے مسلمانوں میں کئی شبہات پائے جاتے ہیں۔ رپورٹ کی پیشکشی کے وقت ایڈوکیٹ جنرل رام کرشنا ریڈی کی موجودگی نے کئی سوال کھڑے کئے ہیں۔ وائی ایس راج شیکھر ریڈی دورِ حکومت کے تجربات کی بنیاد پر حکومت بی سی کمیشن کی فوری تشکیل کا فیصلہ کرسکتی ہے کیونکہ ایک سے زائد مرتبہ عدلیہ نے واضح کردیا کہ صرف بی سی کمیشن کو ہی تحفظات کی فراہمی کی سفارش کا اختیار حاصل ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ قانونی رائے کے حصول کا یہ مرحلہ کس قدر جلد مکمل ہوپائے گا۔ واضح رہے کہ مسلمانوں اور درج فہرست قبائیل سے متعلق کمیشنوں نے آج چیف منسٹر کو اپنی رپورٹ پیش کردی۔ اطلاعات کے مطابق چیف منسٹر نے دونوں رپورٹس کا جائزہ لیتے ہوئے رام کرشنا ریڈی کو اپنی تجاویز اور قانونی رائے پیش کرنے کی ذمہ داری دی ہے۔ واضح رہے کہ رام کرشنا ریڈی مخالف تحفظات وکیل کی حیثیت سے شہرت رکھتے ہیں اور آندھرا پردیش ہائی کورٹ میں دو مرتبہ بھی تحفظات کے خلاف ان کی درخواست پر عدالت نے تحفظات کو کالعدم کردیا تھا۔ سپریم کورٹ میں رام کرشنا ریڈی نے اپیل دائر کی جو ابھی بھی برقرار ہے۔ایڈوکیٹ جنرل جنہوں نے سابق میں تحفظات کی مخالفت کرتے ہوئے یہ دلیل پیش کی تھی کہ بی سی کمیشن کے بغیر تحفظات کی فراہمی ممکن نہیں ہے اور عدالت نے بھی اس دلیل کو قبول کیا تھا لیکن دونوں کمیشنوں کی رپورٹ ملنے کے باوجود حکومت نے بی سی کمیشن کی تشکیل کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ برخلاف اس کے قانونی رائے حاصل کی جارہی ہے۔ سدھیر کمیشن آف انکوائری نے 250سے زائد صفحات پر مشتمل اپنی جامع رپورٹ میں مسلمانوں کی تعلیمی، معاشی اور سماجی پسماندگی کا احاطہ کیا۔ کمیشن نے یہ رائے دی کہ پسماندگی کی بنیاد پر مسلمان تحفظات کے حقیقی مستحق ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ کمیشن نے 9 اہم سفارشات پیش کی ہیں جبکہ دیگر سفارشات عمومی نوعیت کی ہیں۔ کمیشن کی اہم سفارشات میں تحفظات کے علاوہ ایس سی ایس ٹی طبقات کی طرح مسلمانوں کیلئے بھی سب پلان اور ہر شعبہ میں یکساں مواقع کی فراہمی جیسی سفارشات شامل ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ سدھیر کمیشن بعض دیگر محکمہ جات سے حاصل ہونے والی رپورٹس کی بنیاد پر ستمبر میں اپنی میعاد کے اختتام سے قبل حکومت کو ایک اضافی رپورٹ حوالے کریگا۔

TOPPOPULARRECENT