Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / حکومت تلنگانہ مسلمانوں کو دیگر طبقات کے مماثل ترقی فراہم کرنے سنجیدہ

حکومت تلنگانہ مسلمانوں کو دیگر طبقات کے مماثل ترقی فراہم کرنے سنجیدہ

اقلیتی طلبہ کو سیول سرویس کی مفت تربیت، طلبہ میں میٹریل کی تقسیم ، جناب محمد محمود علی و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔21جولائی(سیاست نیوز)حکومت تلنگانہ کے محکمہ اقلیتی بہبود اور سنٹر فار ایجوکیشن ڈیولپمنٹ آف مینارٹیزکے اشتراک سے ایک سو اقلیتی طلبا وطالبات کوسال 2018کے سیول سروس امتحانات کی مفت کوچنگ کے لئے منتخب کیاگیاہے۔ آج یہاں میڈیا پلس آڈیٹوریم گن فاونڈری میں منعقدہ تقریب کے دوران ڈپٹی چیف منسٹر الحاج محمد محمودعلی کے ہاتھوں مذکورہ طلبہ میںنصابی میٹریل اور اپرول لیٹر کی تقسیم عمل میںلائی گئی۔ مشیر حکومت تلنگانہ برائے اقلیتی امور جناب اے کے خان‘ کے علاوہ سکریٹری محکمہ اقلیتی بہبود جناب سید عمر جلیل آئی اے ایس‘ پروفیسر ایس اے شکورڈائرکٹر سی ای ڈی ایم ‘ کے علاوہ جناب شیخ چاند ساجد اور منتخب طلبہ کی کثیرتعداد موجود تھی۔ جناب محمد محمودعلی نے منتخب طلبہ کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے تعلیم کی اہمیت او ر افادیت کے متعلق انہیںسمجھایا۔ جناب محمد محمودعلی نے کہاکہ ڈاکٹر یا انجینئر کا پیشہ اختیار کرنا مشکل کام نہیں ہے ۔ اگر کوئی لڑکا یا لڑکی آئی پی ایس یا پھر آئی اے ایس منتخب ہوتا ہے تو اس سے نہ صرف ملک وملت کی خدمت کی جاسکتی ہے بلکہ مسلمان معاشرے کے وقار میںبھی اضافہ ہوتا ہے ۔ جناب محمد محمود علی نے پیش رو مقررین کاحوالہ دیتے ہوئے کہاکہ یقینا جو طلبا وطالبات انتھک محنت کرتے ہیں ان کا نتیجہ بھی سب سے بہتر ثابت ہوگا ۔انہوں نے کہاکہ ٹیلی ویثرن او رموبائیل فون ہمارے معاشرے کی سب سے بڑی برائی بن کر سامنے آرہے ہیں ۔ ان دوچیزوں سے اقلیتی طبقے سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کی تعلیم بری طرح متاثر ہورہی ہے اور جس معاشرے سے تعلیم ختم ہوجاتی ہے اس کا زوال یقینی ہوجاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت بالخصوص چیف منسٹر کے چندرشیکھر رائو مسلمانوں کی تعلیمی پسماندگی کو دور کرنے اور انہیں دیگر طبقات کے مساوی ترقی کے موقع فراہم کرنے میںنہایت سنجیدہ ہیں۔ اب ہماری باری ہے کہ کس طرح حکومت کی فراہم کردہ مرعات سے استفادہ کرتے ہوئے ملک وملت کی خدمت میںخود کو آگے رکھتے ہیں۔ بیرونی ریاستوں سے مفت ٹریننگ کے لئے منتخب ہونے والے طلبہ وطالبات کو اسٹائی فنڈ پانچ ہزار روپئے دیاجائے گا جبکہ حیدرآباد کے طلبہ کو ڈھائی ہزار روپئے فراہم کئے جائیں گے ۔ اس کے علاوہ نصابی میٹرئیل بھی حکومت کی جانب سے فراہم کیاجائے گا۔ جناب محمد محمودعلی نے کہاکہ طلبہ کو اٹھارہ گھنٹوں تک پڑھائی کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہمیںامید ہے کہ اس بار ایک سو میں سے کم ازکم پچیس سے تیس طلبہ کا بطور ائی اے ایس اور آئی پی ایس انتخاب عمل میں آئے گا۔جناب اے کے خان نے طلبہ کی کثیرتعداد سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ لاکھوں کی تعداد میںامیدوار یوپی ایس سی اور تلنگانہ اسٹیٹ پبلک سروس کمیشن کے امتحانات میںشرکت کرتے ہیں جبکہ ان میںسے تھوڑے امیدوار وں کا ہی انتخاب عمل میںآتا ہے ۔ لہذا مسابقتی امتحانات میں بڑھتے مقابلے کے پیش نظر اس بار حکومت تلنگانہ نے شہر کی سب سے بہترین کوچنگ سنٹرس کی خدمات سے استفادہ کرنے کا فیصلہ کیاہے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ طلبہ کو چاہئے کہ وہ حکومت کی جانب سے فراہم کی جانے والی سہولتوں سے استفادہ کرتے ہوئے قوم او رملت دونوں کا نام روشن کریں۔انہوں نے کہاکہ آئی اے ایس اور آئی پی ایس کی کوچنگ کے دوران ہونے والے ہر امتحان میں کرو یامرو کے موقف کے ساتھ ہماری شرکت ہی کامیابی کی ضمانت ثابت ہوگی۔ جناب عمر جلیل نے محکمہ اقلیتی بہبود اور سی ای ڈی ایم سے منتخب کوچنگ سنٹرس کی تفصیلات پیش کی ۔ جناب ایس اے شکور نے خیرمقدمی خطاب کیا۔

TOPPOPULARRECENT