Thursday , July 20 2017
Home / شہر کی خبریں / حکومت سے رمضان کا غریبوں کو گفٹ پیاک کے ملبوسات کے معیار پر سوالیہ نشان

حکومت سے رمضان کا غریبوں کو گفٹ پیاک کے ملبوسات کے معیار پر سوالیہ نشان

پولیس کے تعاون سے چیک کرنے کا فیصلہ ، 16 جون کو کپڑوں کی تقسیم ، اے کے خاں کی خصوصی دلچسپی
حیدرآباد۔ 9 جون (سیاست نیوز) حکومت نے رمضان المبارک کے موقع پر غریبوں کو گفٹ پیاک دینے کا فیصلہ کیا ہے لیکن جس مالیت میں تین ملبوسات سربراہ کرنے کا ٹنڈر منظور کیا گیا اس سے ملبوسات کے معیار پر سوالیہ نشان اٹھ رہے ہیں۔ گزشتہ سال بھی گفٹ پیاک میں سربراہ کیئے گئے ملبوسات غیر معیاری ہونے کی شکایت ملی تھی جس کے باعث جاریہ سال پولیس کے تعاون سے معیار کی چیکنگ کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ہر گفٹ پیاک میں ایک ساڑی، لڑکیوں کے لیے شرٹ شلوار اور جینٹس کے لیے کرتہ پاجامہ بطور تحفہ پیش کیا جائے گا۔ اس سلسلہ میں ٹینڈرس طلب کئے گئے تھے اور مختلف کمپنیوں نے اس مرتبہ کم سے کم رقم میں سربراہی کا پیشکش کیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ 380 روپئے فی پیاک کے حساب سے ٹنڈر کو منظوری دی گئی۔ صرف 380 روپئے میں کیا تین معیاری ملبوسات کی سربراہی ممکن ہے؟ یہ وہ سوال ہے جو خود عہدیداروں کے درمیان گشت کررہا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ گزشتہ سال 470 روپئے میں تین ملبوسات فراہم کئے گئے تھے جو کہ غیر معیاری ثابت ہوئے۔ اب 380 روپئے میں کس طرح معیاری ملبوسات کی فراہمی ممکن ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ ٹنڈر کے موقع پر جاریہ سال زیادہ مسابقت دیکھی گئی اور اسی لیے کم سے کم آفر کو قبول کرلیا گیا۔ محکمہ ا قلیتی بہبود نے پولیس کی ٹیمیں تشکیل دی ہیں جو وقتاً فوقتاً ملبوسات کے معیار کا جائزہ لے گی جہاں سے ملبوسات کی پیکنگ کی جارہی ہے، ان مقامات کا دورہ کیا جائے گا۔ حکومت کے مشیر برائے اقلیتی امور اے کے خان نے پولیس کی ٹیموں کو اس سلسلہ میں متحرک کردیا ہے۔ انہیں یقین ہے کہ 380 روپئے میں معیاری ملبوسات کی سربراہی عمل میں آئے گی۔ اقلیتی بہبود کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ ٹینڈر معاملات میں غیر ضروری مسابقت کے سبب یہ صورتحال پیدا ہوئی اور حکومت کو ٹینڈر طلب کرنے کے بجائے کم سے کم 500تا 600 روپئے کی حد مقرر کرتے ہوئے بڑی کمپنیوں سے 3 ملبوسات حاصل کرنی چاہئے تاکہ غریبوں کو معیاری ملبوسات فراہم ہوسکیں۔ گزشتہ سال صرف ایک مرتبہ استعمال کرنے پر ہی کپڑے ناکارہ ہوگئے تھے۔ حکومت نے جاریہ سال دو لاکھ غیر خاندانوں میں رمضان گفٹ پیاک تقسیم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ کپڑوں کی تقسیم 16 جون کو عمل میں آئے گی جبکہ 18 جون کو چیف منسٹر کی دعوت افطار ہے۔ دعوت افطار کے دن ریاست کی 400 مساجد کے پاس اجتماعی دعوت افطار اور طعام کا اہتمام کیا جائے گا۔ حیدرآباد کے 24 اسمبلی حلقوں میں ہر اسمبلی حلقے سے ایم ایل اے اور کارپوریٹر کے ذریعہ 6 مساجد کے ناموں کی فہرست حاصل کی گئی ہے۔ ہر مسجد میں 500 گفٹ پیاک کی تقسیم عمل میں آئے گی۔ مساجد کے انتخاب میں اس بات کو پیش نظر رکھا گیا ہے کہ مساجد غریب اور سلم علاقوں کے قریب ہوں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT