Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / حکومت کو شریعت میں مداخلت کا حق نہیں :ایس پی

حکومت کو شریعت میں مداخلت کا حق نہیں :ایس پی

پرتاپ گڑھ ، 23 اگست (سیاست ڈاٹ کام)سماج وادی پارٹی کے سینئر لیڈر آصف صدیقی نے عدالت کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو شریعت میں مداخلت کا حق نہیں ہے ۔جبکہ عدالت نے قرآن کے فیصلے کی تین نشست میں تین طلاق کو جائز اور ایک نشست میں تین طلاق کو غیر آئنی قرار دیا ہے ۔ عدالت نے ضرور حکومت کے پالے میں گیند ڈال کر سیاست میں ایک نئی بحث کا آغاز کیا ہے۔ اتر پردیش میں پرتاپ گڑھ ضلع کے یواین آئی دفتر میں بات چیت کے دوران انہوں نے مذکورہ تاثرات کا اظہار کیا ۔ صدیقی نے کہا کہ طلاق بدترین عمل ہے لیکن جب رشتہ میاں بیوی کے درمیان ابتر ہو جائے تو ایسی حالت میں جب کوئی مصالحت کا راستہ باقی نہ رہے تو طلاق دیا جا سکتا ہے ۔ جبکہ اسلام میں خواتین کو پوری آزادی حاصل ہے ۔طلاق کے معاملے کو لے کر بی جے پی کی نیت درست نہیں ہے ۔اس نے یہ ایشو لا کر مسلم مردوں و عورتوں کے درمیان فرق کرنے اور بدنام کرنے کی کوشش کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ عدالت نے چھ ماہ کے اندر پارلیمنٹ میں قانون سازی کی ہدایت دی ہے ۔اگر حکومت کی نیت درست ہے تو اس کو مسلم پرسنل لاء کے تحت اسلامی اسکالروں و ایسے افراد و علماء کرام جن کو قرآن حدیث اور اسلام کے متعلقہ پوری معلومات ہو ان سے مشورہ کر قانون بنائے ۔ قانون بنایا جانا الگ ہے لیکن اس پر عملی جامہ پہنایا جانا آسان نہیں ہے ۔ایک ساتھ تین طلاق بہتر نہیں ہے لیکن طلاق ہو جاتا ہے ۔ یہاں بی جے پی ایک ساتھ تین طلاق کو ایشو بنا کر جو پروپگنڈہ کر رہی ہے اس سے اس کو کوئی سیاسی فائدہ حاصل ہونے والا تو نہیں ہے وہ صرف اپنے حامیوں کو خوش کرنے میں کوشاں ہے ۔حکومت اس مسئلہ پر سیاست کر رہی ہے ۔اس میں بدنیتی شامل ہے ۔کسی بھی سیاسی پارٹی کو شریعت میں مداخلت کا حق نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT