Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد مختلف فرقوں کے اتحاد کا مثالی مرکز

حیدرآباد مختلف فرقوں کے اتحاد کا مثالی مرکز

ایران دنیا بھر کے مسلمانوں میں اتحاد کیلئے کوشاں، نمائندہ ایران متعینہ ہند کا خطاب
حیدرآباد۔/12اگسٹ، ( سیاست نیوز) ایران کے مذہبی رہنما آیت اللہ خامنہ ای کے نمائندہ برائے ہند حجتہ الاسلام مہدی مہدوی پور نے حیدرآباد کو مختلف فرقوں کے درمیان اتحاد کا مثالی مرکز قرار دیا اور کہا کہ ایرانی حکومت دنیا بھر میں مسلمانوں کے باہمی اتحاد کیلئے کوشاں ہے تاکہ اسلام اور مسلم دشمن طاقتوں کی سازشوں کا جواب دیا جاسکے۔ آقا مہدی مہدوی پور آج ایرانی کونسلیٹ میں نئے کونسل جنرل حق بین قمی کی تعارفی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ایران 5000 سال کی تاریخ رکھتا ہے اور فروغ اسلام میں ایران نے اہم رول ادا کیا۔ دنیا بھر میں جہاں کہیں اسلام دشمن طاقتیں سر اُبھارتی ہیں تو سب سے پہلے ایران ان کے خلاف آواز بلند کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران نے کبھی بھی اسلام دشمنوں سے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا حالانکہ اسے آزمائش سے گذرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ ایران کی پالیسی کے مطابق کونسلیٹ کا دفتر مسلمانوں کے اتحاد کا مرکز ہے۔ انہوں نے شیعہ اور سنی علماء اور مشائخ سے اپیل کی کہ وہ کونسلیٹ کو اپنا گھر سمجھیں اور اتحاد کیلئے دونوں ممالک کے روابط مستحکم کریں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان اور ایران کے روابط کافی مستحکم ہیں اور سفارتی تعلقات سے زیادہ دونوں کا رشتہ تمدن سے جڑا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اہلسنت کے کئی جید مفکرین اور محدثین کا تعلق ایران سے رہا ہے۔ صحاح ستہ جسے قرآن مجید کے بعد احادیث کی معتبر کتابوں کا درجہ حاصل ہے اس کے مؤلفین و محدثین ایران سے تعلق رکھتے ہیں۔ بخاری، مسلم، سنن ابن ماجہ، سنن نسائی، سنن ابو داؤد یہ تمام محدثین ایران کے مختلف شہروں سے تعلق رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ تفسیر کبیر، تفسیر طبرانی اور قرآن کے دیگر اہم مفسرین کا تعلق بھی ایران سے ہے۔ انہوں نے کہا کہ اہل تشیع کی چار کتابوں کے مؤلف بھی ایران سے تعلق رکھتے ہیں۔ مہدی مہدوی پور نے کہا کہ عربی زبان کے کئی عظیم ادیب ایران سے وابستہ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اہل سنت کی عظیم شخصیت حضرت شیخ عبدالقادر جیلانیؒ کا تعلق بھی ایران سے ہے اور وہ گیلان شہر کے ہیں۔ ہندوستان کے صوفی بزرگ حضرت خواجہ معین الدین چشتی ؒ کا تعلق ایران کے شہر خراسان سے ہے۔ اس طرح ایران کی سرزمین نے اسلام کی آبیاری اور فروغ میں اہم رول ادا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آیت اللہ خمینی کی قیادت میں انقلاب ایران دراصل اسلام کے احیاء کا ذریعہ ثابت ہوا۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ وقت میں اسلام دشمن طاقتوں سے مقابلہ کیلئے ہمیں اپنے اختلافات کو بالائے طاق رکھنا ہوگا۔ خامنہ ای کے نمائندہ نے امید ظاہرکی کہ حیدرآبادی کونسلیٹ دونوں ممالک کے تعلقات کے استحکام کے علاوہ مختلف فرقوں کو کلمہ کی بنیاد پر متحد کرنے میں اہم رول ادا کرے گا۔ کونسلیٹ کے پی آر او تمجید حیدر عابدی نے فارسی تقریر کا اردو میں ترجمہ کیا۔ مولانا سید مرتضیٰ پاشاہ قادری ، مولانا لقمان حسین موسوی اور مولانا نثار حسین حیدر آغا نے مخاطب کرتے ہوئے مسلمانوں کے مختلف فرقوں میں اتحاد پر زور دیا اور کہا کہ بین فرقہ جاتی اتحاد میں حیدرآباد ملک میں سرفہرست ہے۔ انہوں نے کہا کہ اتحاد کے ذریعہ ہی مخالفین کو جواب دیا جاسکتا ہے۔ علماء نے کہا کہ قرآن مجید نے مسلمانوں کو یہود و نصاریٰ سے دوستی سے منع کیا ہے لیکن افسوس کہ بعض مسلم ممالک ابھی بھی یہود و نصاریٰ سے دوستی کو مستحکم کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں ایران وہ واحد ملک ہے جس نے اسلام دشمن طاقتوں سے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا۔ قاری متین علی شاہ نے قرأت کلام پاک پیش کی اور قاری مجتبیٰ رضوی نے نعت پیش کی۔

TOPPOPULARRECENT