Wednesday , June 28 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد میٹرو پراجکٹ کی عاجلانہ تکمیل کیلئے دتاتریہ کا زور

حیدرآباد میٹرو پراجکٹ کی عاجلانہ تکمیل کیلئے دتاتریہ کا زور

میٹرو ریل اسٹیشنوں کا وزیراعظم نریندر مودی کے ہاتھوں افتتاح کرانے کے اقدامات
حیدرآباد۔ 5 فروری (سیاست نیوز) مرکزی وزیر لیبر بنڈارو دتاتریہ نے آج حکومت تلنگانہ پر زور دیا کہ وہ حیدرآباد میٹرو ریل پراجکٹ کے جاریہ کاموں کی عاجلانہ تکمیل کو یقینی بنائے۔ میٹرو ریل کا بیشتر کام مکمل ہوچکا ہے جس کا افتتاح جلد سے جلد کیا جائے گا۔ انہوں نے یہ بھی خواہش کی کہ ریاستی حکومت ملٹی ماڈل ٹرانزٹ سسٹم (ایم ایم ٹی ایس مرحلہ دوم) کیلئے اپنے حصہ کی رقم 3,000 کروڑ روپئے جاری کرے تاکہ یہ پراجکٹ جلد پورا ہوسکے۔ بنڈارو دتاتریہ نے کہا کہ حیدرآباد میٹرو ریل کے دو لائینس یعنی ناگول تا میٹو گوڑہ اور میاں پور سنجیوا ریڈی نگر (ایس آر نگر) کے کام مکمل ہوچکے ہیں جبکہ میٹو گوڑہ تا بیگم پیٹ ریلوے لائن کے تعمیری کام بھی تقریباً تکمیل کے مراحل میں ہیں لہذا تکمیل شدہ حیدرآباد میٹرو ریل اسٹیشنوں کا وزیراعظم نریندر مودی کے ہاتھوں افتتاح کروانے کا ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا اور کہا کہ اگر حکومت اس سلسلے میں اجازت دے تو وہ (دتاتریہ) خود وزیراعظم سے وقت کا تعین کرواکر پروگرام مقرر کرنے کیلئے اپنی رضامندی کا اظہار کیا۔ آج شام دلکشا گیسٹ ہاؤز میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے دتاتریہ نے یہ بات کہی اور بتایا کہ شہر حیدرآباد حیدرآباد کیلئے حیدرآباد میٹرو ریل پراجکٹ انتہائی اہمیت کا حامل پراجکٹ ہے۔ اس پراجکٹ پر زائد از 12,600 کروڑ روپئے کے مصارف عائد ہوں گے اور اس پراجکٹ کی تکمیل پر گریٹر حیدرآباد میں یومیہ 12 تا 14 لاکھ افراد اپنے مقام سے دیگر مقامات تک سفر کرسکیں گے اور اس پراجکٹ کی تکمیل کے بعد ٹریفک مسائل اور پولیوشن وغیرہ پر بھی قابو پایا جاسکے گا۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ایم ایم ٹی ایس فیس II کے تحت شہر حیدرآباد میں کاموں کی انجام دہی کیلئے بجٹ میں 100 کروڑ روپئے مختص کئے گئے ہیں اور اس کے مساوی رقومات کو ریاستی حکومت سے جاری کرنے کا مطالبہ کیا۔ وزیر نے بتایا کہ ایم ایم ٹی ایس مرحلہ دوم کے تحت فلک نما تا عمدہ کے کام بہت جلد شروع کئے جائیں گے اور پولارم ۔ میڑچل اور پٹن چیرو۔ مولاعلی تا گھٹکیسر اور گھٹکیسر تا یادادری تک ایم ایم ٹی ایس کی توسیع کی جائے گی اور یہ تمام کام ایم ایم ٹی ایس مرحلہ دوم کے تحت ہی انجام دیئے جائیں گے۔ دتاتریہ نے مزید کہا کہ بجٹ میں ریلوے ٹریک رینیول پر اولین ترجیح دی گئی اور اس کے لئے اسپیشل ریلوے سیفٹی فنڈ فراہم کیا جاتا ہے۔ سابق میں صرف 27000 کروڑ روپئے ریلوے سیفٹی فنڈ کیلئے مختص کئے گئے تھے، لیکن اس مرتبہ ریلوے سیفٹی فنڈ کیلئے ایک لاکھ کروڑ روپئے مختص کئے گئے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT