Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / حیدرآباد کے دو اوقافی جائیدادوں کو ترقی دینے کی تجویز

حیدرآباد کے دو اوقافی جائیدادوں کو ترقی دینے کی تجویز

مرکزی وقف ڈیولپمنٹ کارپوریشن سے تعاون کی خواہش
حیدرآباد۔ 6 ۔ اپریل ( سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے شہر کی دو اوقافی جائیدادوں کی ترقی کیلئے مرکزی وقف ڈیولپمنٹ کارپوریشن سے تعاون کی خواہش کی ہے۔ وقف ڈیولپمنٹ کارپوریشن نے تلنگانہ محکمہ اقلیتی بہبود کی جانب سے پیش کردہ تجویز سے اتفاق کرتے ہوئے دونوں اوقافی جائیدادوں کی تفصیلات طلب کی ہے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے نئی دہلی میں مرکزی وزارت اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کو دونوں اوقافی جائیدادوں کی تفصیلات سے واقف کرایا۔ وقف ڈیولپمنٹ کارپوریشن نے دونوں جائیدادوں کی ترقی سے اصولی طور پر اتفاق کرلیا ہے۔ جن دو اوقافی جائیدادوں کی نشاندہی کی گئی، ان میں بیگم پیٹ پر واقع ٹاسک فورس آفس اور شیخ پیٹ میں واقع چوکھنڈی کی اراضی شامل ہے ۔ ٹاسک فورس آفس کی 913 مربع گز اراضی ، عاشور خانہ نعل صاحب پتھر گٹی کے تحت وقف ہے جبکہ شیخ پیٹ کی 800 گز اراضی مسلم قبرستان کے تحت ہے۔ شہر کے مرکزی مقامات پر واقع ان اراضیات کو ترقی دیتے ہوئے وقف بورڈ کی آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔ وقف ڈیولپمنٹ کارپوریشن محکمہ اقلیتی بہبود کی رپورٹ کا جائزہ لینے کے بعد پلان کی تفصیلات طلب کرے گا اور تعمیری بجٹ کو قطعیت دی جائے گی۔ بتایا جاتا ہے کہ دونوں پراجکٹس کی تکمیل سے تلنگانہ حکومت مرکزی فنڈ سے اوقافی جائیدادوں کو ترقی دینے میں سرفہرست ہوجائے گی۔ اسی دوران وقف بورڈ نے شہر میں 36 جائیدادوں کی نشاندہی کی ہے جنہیں ترقی دیکر بورڈ کی آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔ حج ہاؤز سے متصل زیر تعمیر کامپلکس اور کھلی اراضی کے سلسلہ میں بین الاقوامی ٹنڈرس طلب کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ اس سلسلہ میں حکومت کی منظوری کا انتظار ہے۔ ایک تخمینہ کے مطابق اوقافی جائیدادوں کی ترقی سے وقف بورڈ کو 5 تا 10 ہزار کروڑ روپئے مالیتی جائیدادیں حاصل ہوسکتی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT